Monday, 20 November 2017

انگریزی زبان اور ہم (English language and us)



انگریزی زبان اور ہم

انگریزی زبان اگرچہ دنیا میں سب سے زیادہ بولے جانے والی زبان ہے لیکن یہ زہانت کا معیار نہیں ہے- انگریزوں کے پاک و ہند برصغیر میں آنے سے پہلے اس خطے میں فارسی، عربی، اردو اور ایسی ہی زبانیں رائج تھیں- مسلمانوں نے اس سے صدیوں پہلے اپنی زبانوں میں ہی سب کچھ سیکھا، دریافت کیا اور نئی نئی ایجادات کیں البتہ زیادہ علمی ترقی عربوں نے ہی کی تھی- لیکن اصل بات یہ ہے کہ برطانیہ جو اس وقت کا سپرپاور تھا، اس نے برصغیر میں آہستہ آہستہ اپنے قدم جمائے اور یہاں کے باشندے مغلوب ہوتے گئے- انھوں نے اپنے رسم و رواج اور انگریزی زبان کو برصغیر میں غالب کیا تاکہ مسلمانوں اور ہندووں کو غلام بنالیا جائے، اور حقیقت یہ ہے کہ ہم ابھی تک انگریزوں کے غلام ہیں، چاہے وہ برطانیہ کے انگریز ہوں یا امریکہ کے- 

ہمارے دوبارہ عروج کیلئے ایک راز یہ بھی ہے کہ اگر ہم اس غلامی سے نکلنا چاہتے ہیں تو ہمیں اپنی زبانوں (اردو، فارسی، عربی وغیرہ) پر بھی دسترس حاصل کرنا پڑے گی- المیہ یہ ہے کہ ہم سمجھتے ہیں کہ انگلش ہی سب کچھ ہے اور سارا علم بھی صرف اس میں ہی حاصل کرنا چاہیئے- موجودہ دور کا یہ تقاضہ ضرور ہے کہ ہمیں انگریزی لکھنی، بولنی اور سمجھنی آنی چاہیئے لیکن اس کا مطلب یہ نہیں کہ ہم اپنی زبانیں میں ایک اعلٰی معیار حاصل کرنے کی کوشش نہ کریں- پس، ہمیں انگریزی کے ساتھ اپنی زبانوں کو بھی ساتھ چلانا ہے تاکہ ان میں جو خزانے ہیں، ان سے مستفید ہوسکیں- انشاءاللہ

بچوں کے معاملے میں ہمیں خاص احتیاط کی ضرورت ہے- ایک بزرگ نے کہا کہ پانچویں جماعت تک ہمیں اسکولوں میں ہر چیز اردو ہی میں پڑھانی چاہیئے- اس کے ساتھ عربی اور دوسری زبانیں، اور قرآن کی ابتدائی تعلیم بھی دینی چاہیئے- انگلش کو چھٹی جماعت میں متعارف کرانا چاہیئے- 

آپ کا کیا خیال ہے؟

- سید رُومان اِحسان

Sunday, 19 November 2017

Islamabad Current Dharna - Khadim Hussain Exposed


ISLAMABAD CURRENT DHARNA - KHADIM HUSSAIN EXPOSED


Khadim Hussain of current Islamabad dharna is a vulgar man but not all clerics in Pakistan are like him. He has spoken against not only Late Edhi Sahib but Dr. Zakir Naik also and he uses quite abusive language which is not worthy of anyone promoting Islam.
In these matters, we should be very careful before voicing opinions. In his earlier lectures also, Khadim Hussain seems a clear bigoted fellow. It does not mean however that the issue of blasphemy against our Prophet (pbuh) is not important Naooz billah but Khadim Hussain is carrying out his campaign very irresponsibly and 'much' against the true spirit of Islam.

VIDEO - Khadim Hussain Rizvi Exposed By Molana Tariq Jameel & Muhammad Ali Mirza

LINK: https://www.youtube.com/watch?v=DeR_P1G4hI4

Saturday, 18 November 2017

"MERCY IN CREATION" - By Shaykh Zulfiqar Ahmad



MERCY IN CREATION
[By Shaykh Zulfiqar Ahmad]

http://www.tasawwuf.org

According to a Hadith, Allah divided His Mercy into hundred parts, and distributed only one of those parts in this world He created. Let us think of all the love in this world; be it between a mother and child, a husband and wife, a brother and sister, be it between animals and their young, be it between friends. All the love amongst these people and in this world comprises just one part out of seventy of Allah’s Mercy. This brings to mind the question that what tremendous mercy might Allah show on the Day of Judgment?
A bird is a very weak little thing. It builds a nest for its young and leaves to get food. Now if the nest was in a house and the door is closed upon the bird’s return, this little bird will frantically search for some way to get to its nest, flapping its wings at one wall and then the next. She gets tired but keeps struggling to find a way to her young so she can feed them. If the door opens she flies hurriedly to feed her young, but if it remains shut then she will die flapping against the door, looking for some passage to her young. This bird is such a little thing but Allah has put such love inside it that she is willing to die but cannot tolerate her young going hungry.

A chicken is also a very delicate little creature, but it protects its young in its wings against a cat. It knows that it is no match for the cat, but the mother’s love inside this chicken compels it to stand up against the cat, because it knows that the cat will harm its children. Such is the love that Allah has put inside this chicken that it is prepared to give its life in defense of her children.

Only a mother can know and understand how much love Allah has put in her heart for her children. This love is a mountain and no one has been able to scale its heights; this love is an ocean and no one has been able to calculate its depths.
A mother loves her children unconditionally, with no display. A mother loves her child whether the child is obedient or disobedient, honorable or dishonorable. After Allah and His Messenger, only a mother can love even the disobedient. This world likes the successful and good, but hates those who are hateful and disrespectful and rejects them. However, a mother is a mother and loves her children no matter is they are obedient or disobedient, kind or unkind. A mother cannot be separated from her child.
A Woman’s Yearning

A woman’s greatest wish is to become a mother, because that is how Allah has made her. She gets worried if after marriage she somehow cannot have children, and prays day and night in every prayer and in tahajjud. When she goes for Umra and Hajj she will pray for children. She has such a yearning in her heart for motherhood that this becomes the first thing that she prays for and it starts to consume her. Allah might have given a big house and a successful husband who loves her, but something will be missing from her life and she will be sad. She will only have one wish despite all this, and that is the wish to become a mother.

This same woman’s life will be transformed if Allah blesses her with children. Her face will gleam and she will say that spring has come to her house. She spends all day running after this child and stays awake all night catering to this child’s needs. She stays sleepless and hungry for this child’s sake, but this struggle and hardship seem easy for her. Why? This is only because Allah has put the love of her children in her heart.

Now she forgets herself after begetting children. She goes to the market but does not look for adult clothes for herself, but searches for little clothes for her child and anything else she can decorate the nursery with. If she becomes tired, one look at her child relieves her of her fatigue; if she is worried, she hugs the child close to her and forgets all these worries, and thinks that she has gained all the happiness in the world.

She even forgets her relations, in that if her sister dislikes the child then she does not consider her a sister. Now the child becomes the purpose and focal point of her life. This child grows up and starts working, but the mother keeps worrying and stays up late waiting for him. The rest of the household sleeps but this mother stays awake waiting and worrying about whether the child has eaten or not.

If the child hurts the mother to such a degree that the mother says that she will never speak to him again, the child only has to come and beg forgiveness and the mother will immediately do so because she is a mother. If the mother has been hurt worse than this and says that she will not forgive him, then if the child falls to her feet she will immediately pardon him since a mother cannot bear to see her young son begging her thus. If the mother is hurt worse than this and is angrier still, vowing not to forgive him because he is so disobedient and hurtful, then he cries and begs for forgiveness. The mother’s heart melts because she cannot bear to see her child cry. Just a minute ago she was angry, vowing not to speak to her child, but now she wipes his tears with her own shawl forgetting how this child had hurt and angered her.
A mother loves her children so much that she cannot bear to see tears coming from their eyes. Allah loves His creation much more than a mother loves her children and cannot bear to see tears either. No matter how much someone has strayed from the right path, Allah will forgive this person if he begs for forgiveness with a sincere heart and vows to amend his ways. If an ashamed servant of Allah comes to Him asking for forgiveness with a true heart, Allah forgives him because of the tears that he sheds.

Examples of Mercy

Allah is extremely merciful. An idol worshipper used to worship an idol named Sanam. He sat up calling the name “Ya Sanam” all night, and towards the dawn he started getting drowsy and so he mistakenly took one of the Glorious Names of Allah, “Ya Samad.” Allah immediately turned His attention and asked, “What do you want My servant?” The angels said in astonishment, “O Allah, this is an idol worshipper and only took Your Name in forgetfulness.” Allah said, “This person calls on these idols all night and they don’t answer him. What difference is there between Me and the idols if I don’t answer him either?”

Allah wants us to seek forgiveness and come towards Him. Hadith says that the Messenger of Allah was traveling and stopped on the way at a village. A woman was cooking at a fire nearby and he noticed that she constantly had to push her child back who would come forward. She said to the Prophet, “I work with this fire all day; my son wants to play with it but I have to push him back all the time because I’m frightened for him. If Allah loves us more than we love our children, how can He put us in Hell?”

Hearing this the Messenger of Allah sat with his head bowed and his eyes filled with tears. He cried for some time and then said, “Allah does not want to send His creation into Hell, but it is man himself who buys Hell for himself through his disobedience to Allah. He forgets where he has come from and who his Caretaker is. He does not seek forgiveness from his Creator.”

The Merciful Creator

Allah is a Merciful God who wants to forgive us, and His Mercy tries to find excuses for forgiving us. We must take advantage of the time that we have in this life and seek forgiveness and amend our ways. May Allah give us the ability to seek His forgiveness and amend our ways. Aameen!

Thursday, 16 November 2017

Dua for Jumm'ah


یا اللہ

ہمیں اسلام کوحقیقی معنوں میں سمجھنےاورصحیح معنوں میں زندگی میں لاگوکرنےکی توفیق عطا فرماتاکہ ہم آخرت میں سرخروہوسکیں- پاکستان اورعالمِ اسلام کوجلدعروج عطا فرما اوراسلام کو پوری دُنیا میں غلبہ عطا فرما- امام مہدی کا جلد ظہورفرما اورہمیں انھیں پہچاننےاورانکا ساتھ دینےکی توفیق عطا فرما- دشمنانِ اسلام کو نیست ونابود کردے

آمین ثم آمین

Smog and 2 Nafil Shukrana




Tuesday, 14 November 2017

HADITH-E-QUDSI


HADITH-E-QUDSI

Hadith e Qudsi is a sub-category of hadith which is regarded as the words of Allah. According to as-Sayyid ash-Sharif al-Jurjani, the hadith qudsi differ from the Qur'an in that the former are "expressed in Prophet's pbuh words", whereas the latter are the "direct words of God".


Monday, 13 November 2017

Our Prophet ﷺ the best of creation


OUR PROPHET ﷺ - THE BEST OF CREATION

How well do we know our Prophet ﷺ the best of creation?

There was a person whose humility was like the Earth and whose generosity like the Sun. A man whose speech was gentler, subtler, and clearer, than the dew which adorns meadows in the early mornings of summer. Although he walked the Earth over a millennium ago, his personality, his message, and his very essence, continue to inspire and attract over 1 billion people today.

We all know we have to love him, follow him, and imitate him if we want to pursue happiness in this world and the next. Think about it: Is any of this possible if we do not know about him? Can love for the Prophet (peace be upon him) blossom in our hearts while we remain ignorant about him and his life?

FROM FACEBOOK PAGE: Hazrat Maulana Abdurahman JAMI - Rehmatullah Alahy

LINK: https://web.facebook.com/HazratMaulanaJami/

Sunday, 12 November 2017

Things a person fond of literature loves


Things a person fond of literature loves (well not quite all of them)
~ Drinking coffee or tea
~Reading books
~Cold weather
~Classic movies
~Woods
~Bright cities as well as remote villages
~Nature
~Cooking for your family and friends
~Long walks
~Windy days
~Travelling
~Long roads with mountains
~Window shopping
~Bookstores
~Chidren
~Spending days with friends
~Vintage pictures
~Being nostalgic
~Having wanderlust
~Flowers
~Laugh....!!!!!

Smog: nature’s revenge (Editorial in 'DAWN')

Saturday, 11 November 2017

(Beard & Muslim) - داڑھی اور مسلمان


داڑھی اور مسلمان

یہ بھی ایک المیہ ہے کہ بہت سے مسلمان لمبی داڑھی تو رکھ لیتے ہیں لیکن ان کے دل کینہ، حسد یا تکبر سے پاک نہیں ہوتے- داڑھی بےشک ایمان کا ایک جُز ہے لیکن اسلام میں داڑھی ہے، داڑھی میں اسلام نہیں- کچھ دینی جماعت والے شروع سے ہی لوگوں کو لمبی داڑھی رکھوا دیتے ہیں جو کچھ زیادہ صحیح نہیں ہے- اایسے بہت سے لوگوں کے ابھی اخلاق ٹھیک نہیں ہوتے لیکن داڑھی پوری ہوتی ہے جس سے وہ معاشرے کو ایک دینی مسلمان کا غلط تاثر دیتے ہیں- شروع میں داڑھی چھوٹی رکھنی چاہیئے اور قدم بہ قدم آگے بڑھنا چاہیے- اسلام میں ہر چیز میں توازن ضروری ہے

افسوس یہ ہے کہ ہر سفید داڑھی والا “بزرگ“ نہیں ہوتا- بحرحال بہت سے عمر رسیدہ باریش حضرات واقعی “بزرگ“ بھی ہوتے ہیں اس لئے ہمیں ایک ہی نظریے سے سب کو جانچنا نہیں چاہیئے- دوسری طرف بہت سے کلین شیو حضرات بھی اچھے انسان اور اچھے مسلمان ہوتے ہیں

داڑھی رکھنا بحرحال نہ صرف سنتِ مبارکہ ہے بلکہ واجب ہے کیونکہ یہ وہ سنت ہے جس کا نبی کریم صلی اللہ علیہ وآلِہ وسلم نے حکم دیا کہ رکھو اور مونچھٰں کٹواو- داڑھی کے ساتھ اچھے اخلاق، دوسرے دینی معاملات اور حقوق العباد کے بارے میں بھی بندہ کوشش کرے تو پھریہ بہترین ہے

آخر میں یہ کہ کس کا دل کتنا صاف ہے، اللہ سب سے بہتر جانتا ہے اور اسی نے ہمارا قیامت کے دن حساب لینا ہے- وہ دن جس کی لمبائی سورہ المعارج کی آیت نمبر چار کے مطابق پچاس ہزار سال ہے

- از سید رومان احسان

Friday, 10 November 2017

پاکستان، انڈیا اور اسرائیل (Important)

پاکستان، انڈیا اور اسرائیل

یہود و ہنود میں حیرت انگیز مماثلت پائی جاتی ہے ۔۔۔۔۔!!

سود خور یہودی اور سود خور بنیا ضرب المثل ہیں ۔

یہودی اور ہندو دونوں ہی اپنی مکاری اور سازش کے لیے بھی مشہور ہیں ۔

ہندوؤں میں برہمن خود کو اعلی سمجھتے ہیں اور باقی انسانوں بشمول ہندوؤں تک کو رذیل حتی کہ جانوروں سے بھی بدتر سمجتھے ہیں اور انکو چھونا تک حرام سمجتھے ہیں ۔ یہی حال یہودیوں کا ہے اور جو خود کو اعلی اور برگزیدہ سمجھتے ہیں اور باقی انسانوں کو " گوئم " یعنی انسان اور جانور کی درمیانی مخلوق قرار دیتے ہین ۔

یہاں کچھ لوگوں کا یہ دعوی بھی سچ ہی لگتا ہے کہ ہندوؤں میں برہمن دراصل مصر سے آئے ہوئے یہودی ہیں۔ وہ اس کے لیے مختلف دلائل دیتے ہیں ۔ آپ نوٹ کیجیے کہ آج تک برہمنوں کو "مصر جی" بھی کہا جاتا ہے ۔

یہودی مسجد اقصی کو شہید کر کے ہیکل سلیمانی کی تعمیر کرنا چاہتے ہیں جبکہ ہندو بابری مسجد کو شہید کر کے رام مندر بنانا چاہتے ہیں ۔

ہندوؤں نے کشمیر پر ناجائز قبضہ جما رکھا ہے جبکہ یہودیوں نے فلسطین پر ناجائز قبضہ جما رکھا ہے ۔

اہل یہود نے گائے کا بچڑا بنایا تھا ااور اسکے آگے جھک گئے تھے۔ ہندو گائے کو مقدس سمجھتے ہیں اور اسکے آگے جھکتے ہیں۔

پاکستان کے معاملے میں انکی یہ مماثلت اور بھی حیرت انگیز ہو جاتی ہے ۔

یہودی گریٹر اسرائیل بنانا چاہتے ہیں اور پاکستان کو سب سے بڑی رکاؤٹ خیال کر تے ہیں ۔ جبکہ ہندو اکھنڈ بھارت بنانا چاہتے ہیں اور پاکستان کو ہی اس میں سب سے بڑی رکاؤٹ خیال کرتے ہیں ۔

کچھ لوگ پاکستان کو مدینہ کے بعد دوسری اسلامی نظریاتی ریاست قرار دیتے ہیں اگر یہ درست مان لیا جائے تب معاملہ مزید دلچسپ ہو جاتا ہے ۔

مدینے کو ایک طرف یہودیوں سے خطرہ تھا اور دوسری طرف مکہ کے مشرکوں سے۔

پاکستان کو بھی ایک طرف یہودیوں سے خطرہ ہے یعنی اسرائیل کی ریاست سے اور دوسری طرف ہندوؤں سے جو کہ مشرکین کی سب سے بڑی ریاست ہے اس وقت۔

مدینے کے خلاف بھی مشرکین اور یہودیوں کا اتحاد ہوا تھا جبکہ پاکستان کے خلاف بھی یہودیوں اور ہندوؤں (مشرکین ) کا اتحاد ہے جس سے ہم واقف ہیں۔

اب اگر ہم اس سارے معاملے میں غزوہ ہند کی مشہوری حدیث کو شامل کرتے ہیں تو پاکستان کو بیک وقت ہندو (مشرکین ) اور یہودیوں سے جنگ درپیش ہوگی ۔ اور جس طرح مدینے کی ریاست نے ان دونوں طاقتوں پر غلبہ پا لینے کے بعد آدھی دنیا پر غلبہ پا لیا تھا اسی طرح جب اللہ پاکستان کے ہاتھوں انڈیا اور اسرائیل کا خاتمہ فرمائے گا تو اسلام کو دنیا پر غالب ہونے سے کوئی طاقت نہیں روک سکے گی ۔

اور یاد رکھیے غزوہ ہند والی حدیث پر پاکستان کے علاوہ کوئی اور اسلامی ملک پورا نہیں اترتا کیونکہ پاکستان دنیا کے 56 اسلامی ممالک میں سے واحد ملک ہے جس کی بیک وقت انڈیا اور اسرائیل دونوں سے دشمنی ہے ۔ باقی اسلامی ملکوں کا معاملہ ایسا نہیں ہے۔

پاکستان کو ہی اللہ نے بہادر پاک فوج، نہایت اعلی نیوکلیر میزائل پروگرام اور جذبہ جہاد سے سرشار مجاہدین کی بہت بڑی قوت سے لیس کر رکھا ہے۔۔۔۔

مجھے تو اس ساری صورت حال میں بہت سی باتیں عجیب اور دلچسپ لگتی ہیں آپکا کیا خیال ہے ؟؟؟

شائد اللہ ہم سے کوئی خاص کام لینے والا ہے!

نوٹ ۔۔۔۔۔ اس قسم کے دلچسپ اور معلوماتی مضامین کے لیے Issues & Events نامی ایپ انسٹال کیجیے ۔۔۔۔۔۔ !

حکومت کی کرپشن اور ایمان


حکومت کی کرپشن کسی صورت بھی گوارا نہیں لیکن کرپشن پاکستان کے بیسیوں مسائل میں سے صرف ایک مسلئہ ہے- کیا سمجھے آپ؟ - - -ہمیں اپنےاندر کی کرپشن کو بھی نظرانداز نہیں کرنا -اپنےآپ کو بھی ساتھ ساتھ سدھارنا ہےاوراپنےاندرایمان کی قوت پیدا کرنی ہے انشاءاللہ

Thursday, 9 November 2017

Iqbal on the Idea of Nationalism (Iqbal Day - Nov. 09)


Iqbal on the Idea of Nationalism (Iqbal Day - Nov. 09)
By Dr. Irfanullah Farooqi

November 09 is the birth anniversary of Allama Muhammad Iqbal. This essay throws good light on the topic of Nationalism

LINK:
http://thenewleam.com/2016/07/special-essay-muhammad-iqbal-on-the-idea-of-nationalism-by-dr-irfanullah-farooqi/

Tuesday, 7 November 2017

ALLAH and His Prophet (pbuh)


ALLAH and His Prophet (pbuh)


ALLAH (GOD)


Prophet Muhammad (peace and blessings be upon him)


Monday, 6 November 2017

Save Pakistan from both NS and IK


Reason for current smog in Lahore - Nov. 2017




Terrorism and forces behind it


TERRORISM AND FORCES BEHIND IT

Terrorist group like TTP is funded by Satanic India and Israel. Drone attacks by USA have been further increasing the base of terrorists and making common tribesmen turn against Pakistan. The incident of Raymond Davis proved the presence of US Blackwater in Pakistan which hires and trains hoodlums (not religious Muslims) to do terrorist strikes inside Pakistan. ISIS is a group created by US and Israel, and the chief of ISIS (Al-Baghdadi) is a Jew basically who is member of Israeli secret agency Mossad.

Saturday, 4 November 2017

Most Beautiful People


Most Beautiful People

"The most beautiful people we have known are those who have known defeat, known suffering, known struggle, known loss, and have found their way out of the depths. These persons have an appreciation, a sensitivity, and an understanding of life that fills them with compassion, gentleness, and a deep loving concern. Beautiful people do not just happen." - Elisabeth Kübler-Ross

پردہ تو نظر کا ہوتا ہے - Purdah tau nazar ka hota hai




پردہ تو نظر کا ہوتا ہے ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ اس سوچ نے آدھی انسانیت کو برہنہ کر دیا ہے
،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،،

کہتے ہیں کہ بلھے شاہ ابھی کمسن بچے تھے نہر کے کنارے کھیل رہے تھے, وہیں کچھ خواتین بیٹھی کپڑے دھو رہی تھیں کہ ایک خاتون کے جسم سے قمیض کچھ اوپر ہوئ اور بلھے شاہ کی نظر اس خاتون کے جسم پر پڑ گئی. آپ نے ہاۓ کی آواز نکالی اور فورا اپنی قمیض کے پلو کو اٹھا کر اپنی آنکھوں پر رکھ لیا آنکھیں بند کرنے کے لیے. اب بلھے شاہ نے قمیض کے نیچے پاجامہ نہیں پہنا ہوا تھا, جیسے چھوٹے بچوں کو نہیں پہنایا جاتا, تو قمیض اٹھانے سے آپ کی اپنی شرم گاہ ظاہر ہو گئی.


سب خواتین نے ایک زوردار قہقہ لگایا اور ایک خاتون نے آواز کسی کہ یہ کیسا پردہ ہے کہ اپنا ہی جسم برہنہ ہو جاے ؟ 
جس کو سن کر بلھے شاہ نے یہ تاریخی الفاظ فرمایے کہ
"بی بی پردہ تو نظر کا ہوتا ہے".


سب خواتین کی ہنسی ایک دم بند ہو گئی اور وہ دم بخود رہ گئی ایک کمسن بچے کی اس گہری بات پر. اور سوچنے لگی کہ یہ کون بچہ ہے جو کمسنی میں اتنی گہری باتیں کرتا ہے. 


شام تک پورے محلے میں اس بچے کی شہرت عام ہو چکی تھی.
آپ کا یہ فقرہ اتنا مشہور ہوا کہ آج زبان زد عام ہے. لیکن آج تقوی' کے اس فقرے کی بے حرمتی اس طرح ہونے لگی ہے کہ ظاہری پردے کی نفی کی جانے لگی ہے اور جوابا کہا جاتا ہے کہ پردہ تو نظر کا ہوتا ہے.


لباس جسم سے کم سے کم تر ہوتا جا رہا ہے اور نظر کے پردے کا پرچار ہو رہا ہے, اور وہ بھی دوسروں کے لیے, اپنے لیے وہ بھی نہیں. کہتے ہین "دین میں آسانی ہے"


اس آسانی کو دین پر عمل نہ کرنے کے لیے استعمال کیا جانے لگا ہے. دین میں آسانی کا مطلب یہ ہے کہ نماز کھڑے ہو کر نہیں پڑھ سکتے تو بیٹھ کر پڑھ لو, بیٹھ کر نہیں پڑھ سکتے تو لیٹ کر اشارے سے پڑھ لو.
روزہ ابھی نہیں رکھ سکتے تو کچھ دن بعد رکھ کر قضا کر لینا...


دین میں آسانی کا یہ مطلب نہیں ہے کہ نماز پڑھو یا نہ پڑھو, روزہ رکھو یا نہ رکھو... وغیرہ وغیرہ.
دین میں آسانی ضرور ہے, من مانی نہیں ہے. "پردہ نظر کا ہوتا ہے" تقوی' کی بات ہے, فتوی نہیں ہے کہ پردہ صرف نظر کا ہی ہوتا ہے.
بلھے شاہ جو کمسن تھے, بالغ نہیں تھے, اپنا جسم برہنہ ہونے کا ان کو ابھی گناہ نہیں تھا, لیکن نظر کے پردہ جیسی تقوی کی دولت سے مالا مال تھے, اور ان خواتین کو ان کے جسم کی بے پردگی کے ساتھ نظر کے پردہ پر حیران و پریشان چھوڑ گئے.


خدارا دین کا مذاق نہ بنائیں, دین کو سمجھیں اور دین کی طرف آئیں, دین کی طرف آنا بہت آسان ہے.مسلہ صرف یہ ہوتا ہے کہ نفس کو جس کام کی عادت نہیں ہوتی وہ کام اسے مشکل لگتا ہے. 


مشکل یہی تھی نا کہ دل کو مشکل لگتا ہے, تو پہلے نماز ہمت کر کے شروع کریں اس کے بعد جب دل خود کہے کہ ایک اور پڑھنی چاہیے اس سے باقائدگی اور ہمیشگی حاصل ہو گی. بس اس طرح آپ کا دل خود بخود آپ کو آسان دین کی طرف لے آے گا. یقین کیجیے دین کی طرف آنے سے ہماری زندگی مشکل نہیں ہوتی, ہمارہ مزہ ختم نہیں ہوتا, زندگی کا لطف مرتا نہیں, سب چلتا رہتا ہے, بلکہ پہلے سے زیادہ حسین لگتا ہے سب. بس صرف کچھ چیزیں کرنی ہیں اور کچھ کا طریقہ بدلنا ہے.


لیکن پہلے یہ سمجھنے کی ضرورت ہے کہ محض نفس کی سستی کی وجہ سے دین کا مذاق اڑانا بند کریں اور اپنے آپ کو بتائیں کہ یہ دین کے احکام ہیں اور یہ ایسے ہی ہیں. میں اگر آج اس مقام پر نہیں تو کل کو اللہ مجھے یہاں تک پہنچا دے گا. تقوی تک لے جانا اللہ کا کام ہے, آپ کا کام صرف ارادہ اور پہلی کوشش ہے.


تو ارادہ اور باقائدگی سے آسان سی پہلی کوشش شروع کریں. آگے آپ کا دل خود آپ کو اس مقام تک لے جاے گا جہاں دین کی آسانی آپ کو نظر آنے لگے گی اور لے نظر کا پردہ بھی سمجھ آ جاے گا.


جذاک اللہ.


منقول

Ghalib Nizaam - غالب نظام


غالب نظام

اس وقت غالب نظام باطل ہے- جیسا کہ آزاد میڈیا جو ہر وقت جذبات اُبھارتا رہتا ہے- اس لئے دینی لوگ بھی اس نظام کے زد میں ہیں لیکن جو اللہ کی راہ میں کوشش کررہے ہیں وہ اپنے آپ کو پھر بھی کافی بچانے میں کامیاب ہیں اور اس کیلئے قربانی بلکہ قربانیاں دینی پڑھتی ہیں- سارا معاشرہ کہاں دین چاہتا ہے؟ اکثریت تو دین سے آزادی چاہتی ہے اور یہ قرآن کی سورہ الانعام آیت نمبر ١١٦ میں بھی اس کا بیان ہے -

Careful about Mobile Phones and Wifi at Bed-time



BE CAREFUL ABOUT MOBILE PHONES AND WIFI AT BED-TIME

It is recommended to place your mobile phones away from yourself when you sleep at night. Like they can be kept on side-tables. Many people keep mobile phones beside their pillow which can be harmful for their health due to signal rays continuously being transmitted from them. Also turn off Wifi at bed-time for the same reason. We are living in an artificial world and we need to take proper precautions for everything. There are many relevant articles on credible healthcare websites on Internet which you can look up and learn from them.

- S Roman Ahsan.

Your Honour And You


Your Honour And You

Honor is that which no man can give you and no man can take away. It’s a gift a man gives to himself. Rob Roy

Honor is an intense sense of right and wrong, and the adherence to the actions and principles that a man deems right. In the past, a man’s honor was considered something that had to be defended, even to the death. Men fought duels to the death to defend what they declared to be an insult to their honor, or in today’s terms, being disrespected.

Noblemen and warriors, both in the East and in the West, considered it part of their duty to defend their honor, especially if they felt that someone had disrespected them or challenged their honor in some way. And, these men took drastic measures to do so.

In many cases, these duels were not about honor at all, but more about someone’s wounded pride. To fight to the death over some small insult or misunderstanding is not truly defending your honor, but rather defending your pride. The vast majority of these duels of honor were more about defending the man’s reputation, not his honor.

Honor is not something that you have to defend by fighting other men, but you do have to fight for it nonetheless. You have to fight to keep your honor daily. Almost every day of your life you will have opportunities to turn your back on your honor by choosing actions that are dishonorable in one way or another.

The fight to maintain your honor is an internal battle, not an external one. Honor is not something that anyone else can take away from you, but it is something that you can lose. It is up to you whether or not you maintain your honor. Bohdi Sanders ~ excerpt from the #1 Bestseller, BUSHIDO: The Way of the Warrior, available from Amazon at: https://www.amazon.com/dp/1937884201 or from The Wisdom Warrior website at: https://thewisdomwarrior.com.

The secret of the light of Prophet ﷺ


The secret of the light of Prophet ﷺ

Some scholars are awliya who can see very well and have knowledge given to them by Allah. They say when Allah (swt) created the Light of Prophet (s), He created that Light not from His Essence, Dhaatullah, but from His Name “an-Noor.” That Light was in that Essence, and it is what we know from the word “an-Noor,” which is not a word, but rather the secret of Prophet (s) and creation. It appeared to Prophet (s) as a word or essence, and then all the other Beautiful Names and Attributes appeared one after the other, with no beginning and no end.

With the Light that Allah (swt) gave him, Prophet (s) was able to see the secrets of all these Beautiful Names and Attributes that appeared endlessly, and he dressed his ummah with them. He saw the lights of the awliya and scholars and gave to them according to their capacities. A wali was given so he could guide and help people to see these secrets, while a normal person was given less because their capacity would be less.

He dressed them with “laa ilaaha illa-Llah” and gave according to the dhikr of those four words, “SubhaanAllah, alhamdulillah, laa ilaaha illa-Llah, Allahu Akbar.” On the Day of Judgment, they will be dressed like a light on a dark night with a rainbow of Beautiful Names of Allah (swt)! They will be known as the lovers and followers of Prophet (s) and Allah (swt) will know them when He sees them.

Mawlana Shaykh Hisham Kabbani

FROM FACEBOOK PAGE: Hazrat Maulana Abdurahman JAMI - Rehmatullah Alahy

LINK: https://web.facebook.com/HazratMaulanaJami/

Men in Red


MEN IN RED

Me with my nephew at sister's house in Lahore (October 2017). 
- S Roman Ahsan.


Nationalism and Islam


NATIONALISM AND ISLAM
From Website: http://dailyhadith.adaptivesolutionsinc.com/hadith/Nationalism.htm

Rasul Allah (sal Allahu alaihi wa aalaihi wassallam) said: “He is not one of us who calls for asabiyyah, (tribalism/nationalism) or who fights for asabiyyah, or who dies for asabiyyah.” [Abu Dawud]
On one occasion during the time of the Prophet (sal Allahu alaihi wa sallam), a party of Jews conspired to bring about disunity in the ranks of the Muslims after seeing the Aus and Khazraj harmonious with each other within Islam. A youth from among them was sent to incite remembrance of the battle of Bu'ath, where the Aus had been victorious over the Khazraj. He recited poetry to stir their feelings, remind them of their past differences, and bring about division between them. As a result there was a call to arms. When the news reached the Messenger of Allah (sal Allahu alaihi wa sallam) he said, "O Muslims, remember Allah, remember Allah. Will you act as pagans while I am present among you, after Allah has guided you to Islam, and honoured you thereby and made a clean break with paganism; delivered you thereby from disbelief; and made you friends thereby?" When they heard this they wept and embraced each other. [The Roots of Nationalism In The Muslim World]

Islam is a religion that abhors racism, ethnicism, tribalism, and its newer version, nationalism. Differences of language, colour, cuisine and accent were meant to add flavour to life, not to be used to ridicule or fight each other. The past couple of centuries have seen wars between different ethnic groups on a scale unprecedented before. The rise of nationalism has resulted in bitter conflict between groups that had lived for centuries in harmony. It has set the world on fire and resulted in pandaemonium.
While Allah (subhana wa ta'ala) has prohibited nationalism, Muslims are killing one another and aiding non-Muslims to kill their brothers and sisters in Islam, in the name of saving their own "country". This is despite the fact that such "countries" have no legitimacy in Allah's eyes for the reasons that 1) in none of these is Allah's law held wholly superior to man made law, and 2) there is only one country to which all Muslims belong, i.e. Dar-ul-Islam. Muslims, for thirteen centuries were one bloc, under one leadership, in the name of Allah (subhana wa ta'ala). When you cut an elephant into 100 pieces you don't get one hundred elephants, instead you get a bloody mess. Incited against each other using nationalism, this is what the Muslim Ummah has become.

Thursday, 2 November 2017

Leaders of people of paradise


 

It was narrated that Anas ibn Malik, Allah be pleased with him, said:

"I heard the Messenger of Allah ﷺ say: 'We, the sons of 'Abdul-Muttalib, will be leaders of the people of Paradise:

Myself, Hamzah. 'Ali, Ja'far, Hasan, Husain and Mahdi.

نَحْنُ وَلَدَ عَبْدِ الْمُطَّلِبِ سَادَةُ أَهْلِ الْجَنَّةِ أَنَا وَحَمْزَةُ وَعَلِيٌّ وَجَعْفَرٌ وَالْحَسَنُ وَالْحُسَيْنُ وَالْمَهْدِيُّ

(Sunan ibn Majah - The Book of Tribulations)



Thursday, 26 October 2017

Qur'anic Philosophy - Running After This World


A VERSE FROM QUR'AN WHICH GIVES US A GREAT DIRECTION ON NOT LOSING OUR VISION ABOUT STRIVING FOR SUCCESS IN AFTERLIFE
ENGLISH TRANSLATION: "For him who desires the present (transitory) life (only) We shall hasten an immediate reward for him in this very life (giving) what We will to whom We will. But We have prepared hell for him, he shall enter it, condemned and rejected." - Qur'an, Surat Al-Isra, verse: 18


Tuesday, 17 October 2017

Reality of NGOs


REALITY OF NGOs
About 10 years ago, I wanted to do voluntary work for any good NGO involved in welfare work. I had experience of project-management, report-writing and strong written communication before. So I approached and wrote to the management of an NGO about my wish to volunteer against my skills but they replied that I had to submit Rs.3000 first for it :) Hence, from then onward I decided that I have to do things in my own capacity as a good human and good Muslim. There are so many things we can do for the society in our own way instead of formally signing up for organizations who are just taking funds from foreign countries to further their agenda instead of truly catering services to the country and its people.
- S Roman Ahsan.

Monday, 16 October 2017

16th October - Martyrdom of Sahibzada Liaquat Ali Khan


16 اکتوبر - یوم شہادت جناب صاحبزادہ لیاقت علی خان

16th October - Martyrdom of Sahibzada Liaquat Ali Khan



With Peace, Love & Tolerance - "QADIYANIAT"

WITH PEACE, LOVE AND TOLERANCE - "QADIYANIAT"



WITH PEACE, LOVE AND TOLERANCE - "QADIYANIAT"

- by Dr Fariya Bukhari, MD

We must stop calling COAS General Qamar Bajwa a Qadiyani when he is not one. Moreover, we must not kill or threaten any Qadiyani. Our campaign must be 100% peaceful and support massive dissemination of truth behind the misinformation spread behind Qadyanis' propaganda and their false claims to muslim-hood based upon a fake book Tazakariah written by a false prophet Mirza.

We must expose peacefully the cult money-extorting practices of the Qadiyani clan without picking up a single stone to attack them. Our campaign must be 100% violence-free. We must tell the world what Qadiyanis do to those who try to quit Qadiyanism by persecuting, oppressing, robbing and sometimes even killing the ex-Qadiyanis. We must prove that Tazkariah is not the revelation of Allah but that of dajjjali false diety that master-minded this neo-prophet movement of mirza to destabilize Islam 125 years ago.

Muslims follow Prophet Muhammad (s.a.w.w.) whose love and tolerance changed more than half of the world at his (s.a.w.w.) time and now 1/3rd of the world today. We must educate those who are new to Islam to stay away from being trapped by these pseudo-muslims who actually worship a dajjjali cult NOT Islam.

Everything must be done peacefully with tolerance and love. Treat Qadiyanis as victims of a dark dajjali cult and try to liberate them from this cult with peaceful campaign. That is the only way to burst the bubble of this fitna when every qadiyani fed up of this cult's dark practices will leave it to accept Islam. Protect the ex-Qadiyanis against the Qadiyani clan's oppression. Give them support. Bring them to the public. Give them a voice.

The world must know the dark rituals of this cult that extorts money from millions even controlling their funerals till money is paid off. Peace, Love, Tolerance. That is how our Prophet Muhammad (s.a.w.w.) would have done it today.

Sunday, 15 October 2017

Nabi (SallAllahu Alaihi Wa-Alaihi Wassallam) per durood




قادیانیت کے معتلق تحریر - Note on Qadiyaniat



قادیانیت کے معتلق تحریر

اگر کسی کو قادیانیت کے معتلق جاننا ہے تو یہ تحریر غور سے پڑھیں ،

مسلمان ہونے کے لیے الّٰلہ کے ساتھ محمد (ص) پر کامل ایمان اور اُنکے نبی اخرالزماں (ص) ہونے پر مکمل یقین ہی مسلمان ہونے کی شرط ہے ، 

1974 میں___
جب قومی اسمبلی میں فیصلہ ہوا کہ قادیانیت کو موقع دیا جائے کہ وہ اپنا موقف اور دلائل دینے قومی اسمبلی میں آئیں تو۔۔۔
مرزا ناصر قادیانی سفید شلوار کرتے میں ملبوس طرے دار پگڑی باندھ کر آیا۔متشرع سفید داڑهی۔قرآن کی آیتیں بهی پڑھ رہے تهے۔ اور آپ صلی اللہ علیہ و سلم کا اسم مبارک زبان پر لاتے تو پورے ادب کے ساتھ درودشریف بهی پڑہتے۔ مفتی محمود صاحب رحمہ اللہ فرماتے ہیں کہ ایسے میں ارکان اسمبلی کہ ذہنوں کو تبدیل کرنا کوئی آسان کام نہیں تها۔ماہ نامہ ”الحق اکوڑہ خٹک“ کے شمارہ جنوری 1975 کے صفحہ نمبر 41 پر بیان فرماتے ہیں۔۔۔ 

”یہ مسلہ بہت بڑا اور مشکل تها“ 
اللہ کی شان کہ پورے ایوان کی طرف سے مفتی محمود صاحب کو ایوان کی ترجمانی کا شرف ملا اور مفتی صاحب نے راتوں کو جاگ جاگ کر مرزا غلام قادیانی کی کتابوں کا مطالعہ کیا۔حوالے نوٹ کیئے۔سوالات ترتیب دیئے۔ اسی کا نتیجہ تها کہ مرزا طاہرقادیانی کے طویل بیان کے بعد جرح کا جب آغاز ہوا تو اسی ”الحق رسالے“ میں مفتی محمود صاحب فرماتے ہیں کہ 
”ہمارا کام پہلے ہی دن بن گیا“
اب سوالات مفتی صاحب کی طرف سے اور جوابات مرزا طاہر قادیانی کی طرف سے آپ کی خدمت میں۔۔۔۔

__________________________
سوال۔مرزا غلام احمد کے بارے میں آپ کا کیا عقیدہ ہے؟
جواب۔وہ امتی نبی تهے۔امتی نبی کا معنی یہ ہے کہ امت محمدیہ کا فرد جو آپ کے کامل اتباع کی وجہ سے نبوت کا مقام حاصل کر لے۔
سوال۔اس پر وحی آتی تهی؟

جواب۔آتی تهی۔
سوال۔ (اس میں) خطا کا کوئی احتمال؟
جواب۔بالکل نہیں۔

سوال۔مرزا قادیانی نے لکها ہے جو شخص مجھ پر ایمان نہیں لاتا“ خواہ اس کو میرا نام نہ پہنچا ہو (وہ) کافر ہے۔پکا کافر۔دائرہ اسلام سے خارج ہے۔اس عبارت سے تو ستر کروڑ مسلمان سب کافر ہیں؟
جواب ۔کافر تو ہیں۔لیکن چهوٹے کافر ہیں“جیسا کہ امام بخاری نے اپنے صحیح میں ”کفردون کفر“ کی روایت درج کی ہے۔

سوال۔آگے مرزا نے لکها ہے۔پکا کافر؟
جواب۔اس کا مطلب ہے اپنے کفر میں پکے ہیں۔

سوال۔آگے لکها ہے دائرہ اسلام سے خارج ہے۔حالانکہ چهوٹا کفر ملت سے خارج ہونے کا سبب نہیں بنتا ہے؟
جواب۔دراصل دائرہ اسلام کے کئیں کٹیگیریاں ہیں۔اگر بعض سے نکلا ہے تو بعض سے نہیں نکلا ہے۔

سوال ایک جگہ اس نے لکها ہے کہ جہنمی بهی ہیں؟
(یہاں مفتی صاحب فرماتے ہیں جب قوی اسمبلی کے ممبران نے جب یہ سنا تو سب کے کان کهڑے ہوگئے کہ اچها ہم جہنمی ہیں اس سے ممبروں کو دهچکا لگا)
اسی موقع پر دوسرا سوال کیا کہ مرزا قادیانی سے پہلے کوئی نبی آیا ہے جو امتی نبی ہو؟ کیا صدیق اکبر ؓ یا حضرت عمر فاروق ؓ امتی نبی تهے؟
جواب۔ نہیں تھے۔

اس جواب پر مفتی صاحب نے کہا پهرتو مرزا قادیانی کے مرنے کے بعد آپ کا ہمارا عقیدہ ایک ہوگیا۔بس فرق یہ ہے کہ ہم نبی کریم صلی اللہ علیہ و سلم کے بعد نبوت ختم سمجهتے ہیں۔تم مرزا غلام قادیانی کے بعد نبوت ختم سمجهتے ہو۔تو گویا تمہارا خاتم النبیین مرزا غلام قادیانی ہے۔اور ہمارے خاتم النبیین نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم ہیں۔
جواب۔وہ فنا فی الرسول تهے۔یہ ان کا اپنا کمال تها۔وہ عین محمد ہوگئے تهے (معاذ اللہ نبی کریم صلی اللہ علیہ و سلم کی اس سے زیادہ توہین کیا ہوسکتی تهی )

سوال۔مرزا غلام قادیانی نے اپنے کتابوں کے بارے میں لکها ہے۔اسے ہر مسلم محبت و مودت کی آنکھ سے دیکھ لیتا ہے۔اور ان کے معارف سے نفع اٹهاتا ہے۔ مجهے قبول کرتا ہے۔اور(میرے) دعوے کی تصدیق کرتا ہے۔مگر (ذزیتہ البغایا ) بدکار عورتوں کی اولاد وہ لوگ جن کے دلوں پر اللہ نے مہر لگا رکهی ہے۔وہ مجهے قبول نہیں کرتے۔؟
جواب۔بغایا کہ معنی سرکشوں کے ہیں۔

سوال۔بغایا کا لفظ قرآن پاک میں آیا ہے” و ما کانت امک بغیا“ سورہ مریم ) ترجمہ ہے تیری ماں بدکارہ نہ تهی“
جواب۔قرآن میں بغیا ہے۔بغایا نہیں۔

اس جواب پر مفتی صاحب نے فرمایا کہ صرف مفرد اور جمع کا فرق ہے۔نیز جامع ترمذی شریف میں اس مفہوم میں لفظ بغایا بهی مذکور ہے یعنی ”البغایا للاتی ینکحن انفسهن بغیر بینه“ )پھر جوش سےکہا) میں تمہیں چیلنج کرتا ہوں کہ تم اس لفظ بغیه کا استعمال اس معنی (بدکارہ) کے علاوہ کسی دوسرے معنی میں ہر گز نہیں کر کے دکها سکتے۔!!!
(اور مرزا طاہر لاجواب ہوا یہاں )

13 دن کے سوال جواب کے بعد جب فیصلہ کی گهڑی آئی تو 22 اگست1974 کو اپوزیشن کی طرف سے 6 افراد پرمشتمل ایک کمیٹی بنائی گئی۔جن میں مفتی محمود صاحب“ مولانا شاہ احمدنورانی صاحب“پروفیسر غفور احمد صاحب“چودہری ظہور الہی صاحب“مسٹر غلام فاروق صاحب“سردار مولا بخش سومرو صاحب اور حکومت کی طرف سے وزیر قانون عبدالحفیظ پیرزادہ صاحب تهے۔ان کے ذمہ یہ کام لگایا گیا کہ یہ آئینی و قانون طور پر اس کا حل نکالیں۔تاکہ آئین پاکستان میں ہمیشہ ہمیشہ کے لیے ان کے کفر کو درج کردیا جائے۔لیکن اس موقع پر ایک اور مناظرہ منتظر تها۔۔۔۔۔

کفرِ قادیانیت و لاہوری گروپ پر قومی اسمبلی میں جرح تیرہ روز تک جاری رہی۔گیارہ دن ربوہ گروپ پر اور دو دن لاہوری گروپ پر۔ہرروز آٹھ گھنٹے جرح ہوئی۔اس طویل جرح و تنقید نے قادیانیت کے بھیانک چہرے کو بےنقاب کر کے رکھ دیا۔ اس کے بعد ایک اور مناظرہ ذولفقار علی بھٹو کی حکومت سے شروع ہوا کہ آئین پاکستان میں اس مقدمہ کا ”حاصل مغز “کیسے لکھا جائے۔؟
مسلسل بحث مباحثہ کے بعد۔۔۔۔۔۔
__________________________
22 اگست سے 5 ستمبر 1974 کی شام تک اس کمیٹی کے بہت سے اجلاس ہوئے۔مگر متفقہ حل کی صورت گری ممکن نہ ہوسکی۔سب سے زیادہ جهگڑا دفعہ 106 میں ترمیم کے مسلے پر ہوا۔حکومت چاہتی تھی اس میں ترمیم نہ ہو۔اس دفعہ 106 کے تحت صوبائی اسمبلیوں میں غیر مسلم اقلیتوں کو نمائندگی دی گئی تهی۔ ایک بلوچستان میں۔ایک سرحد میں۔ایک دو سندھ میں اور پنجاب میں تین سیٹیں اور کچھ 6 اقلیتوں کے نام بهی لکهے ہیں۔عیسائی۔ہندو پارسی۔بدھ اور شیڈول کاسٹ یعنی اچهوت۔

مفتی محمود صاحب اور دیگر کمیٹی کے ارکان یہ چاہتے تهے کہ ان 6 کی قطار میں قادیانیوں کو بهی شامل کیا جائے۔تاکہ کوئی "شبہ" باقی نہ رہے۔

اس کے لیے بهٹو حکومت تیار نہ تهی۔وزیر قانون عبدالحفیظ پیرزادہ نے کہا اس بات کو رہنے دو۔
مفتی محمود صاحب نے کہا جب اور اقلیتوں اور فرقوں کے نام فہرست میں شامل ہیں تو ان کا نام بهی لکھ دیں۔
پیرزادہ نے جواب دیا کہ ان اقلیتوں کا خود کا مطالبہ تها کہ ہمارا نام لکھا جائے۔ جب کہ مرزائیوں کی یہ ڈیمانڈ نہیں ہے۔
مفتی صاحب نے کہا کہ یہ تو تمہاری تنگ نظری اور ہماری فراخ دلی کا ثبوت ہے کہ ہم ان مرزائیوں کو بغیر ان کی ڈیمانڈ کے انہیں دے رہے ہیں (کمال کا جواب )

اس بحث مباحثہ کا 5 ستمبر کی شام تک کمیٹی کوئی فیصلہ ہی نہ کرسکی۔چنانچہ 6 ستمبر کو وزیراعظم بهٹو نے مفتی محمود سمیت پوری کمیٹی کے ارکان کو پرائم منسٹر ہاوس بلایا۔لیکن یہاں بهی بحث و مباحثہ کا نتیجہ صفر نکلا۔حکومت کی کوشش تهی کہ دفعہ 106 میں ترمیم کا مسلہ رہنے دیا جائے۔

جب کہ مفتی محمود صاحب اور دیگر کمیٹی کے ارکان سمجهتے تهے کہ اس کے بغیر حل ادهورا رہے گا۔
بڑے بحث و مباحثہ کے بعد بهٹو صاحب نے کہا کہ میں سوچوں گا۔

عصر کے بعد قومی اسمبلی کا اجلاس شروع ہوا۔وزیر قانون عبدالحفیظ پیرزادہ نے مفتی صاحب اور دیگر کمیٹی ارکان کو اسپیکر کے کمرے میں بلایا۔ مفتی محمود صاحب اور کمیٹی نے وہاں بهی اپنے اسی موقف کو دهرایا کہ دفعہ 106 میں دیگر اقلیتوں کے ساتھ مرزائیوں کا نام لکها اور اس کی تصریح کی جائے۔
اور بریکٹ میں قادیانی اور لاہوری گروپ لکها جائے۔

پیرزادہ صاحب نے کہا کہ وہ اپنے آپ کو مرزائی نہیں کہتے، احمدی کہتے ہیں۔
مفتی محمود صاحب نے کہا کہ احمدی تو ہم ہیں۔ہم ان کو احمدی تسلیم نہیں کرتے۔پهر کہا کہ چلو مرزا غلام احمد کے پیرو کار لکھ دو۔

وزیرقانون نے نکتہ اٹهایا کہ آئین میں کسی شخص کا نام نہیں ہوتا (حالانکہ محمد علی جناح کا نام آئین میں موجود ہے ) اور پهر سوچ کر بولے کہ مفتی صاحب مرزا کا نام ڈال کر کیوں آئین کو پلید کرتے ہو؟۔وزیر قانون کا خیال تها شاید مفتی محمود صاحب اس حیلے سے ٹل جائیں گے۔ (لیکن مفتی تو پهر مفتی صاحب تهے )

مفتی صاحب نے جواب دیا کہ شیطان۔ابلیس۔خنزیر اور فرعون کے نام تو قرآن پاک میں موجود ہیں۔کیا ان ناموں سے نعوذ باللہ قرآن پاک کی صداقت و تقدس پر کوئی اثر پڑا ہے۔؟ 

اس موقع پر وزیر قانون پیرزادہ صاحب لاجواب ہو کر کہنے لگے۔
چلو ایسا لکھ دو جو اپنے آپ کو احمدی کہلاتے ہیں۔
مفتی صاحب نے کہا بریکٹ بند ثانوی درجہ کی حیثیت رکهتا ہے۔صرف وضاحت کے لیے ہوتا ہے۔لہذا یوں لکھ دو قادیانی گروپ۔لاہوری گروپ جو اپنے کو احمدی کہلاتے ہیں۔اور پهر الحمدللہ اس پر فیصلہ ہوگیا۔

تاریخی فیصلہ۔۔۔۔۔۔۔۔ 

7 ستمبر 1974 ہمارے ملک پاکستان کی پارلیمانی تاریخ کا وہ یادگار دن تها جب 1953 اور 74 کے شہیدانِ ختم نبوت کا خون رنگ لایا۔اور ہماری قومی اسمبلی نے ملی امنگوں کی ترجمانی کی اور عقیدہ ختم نبوت کو آئینی تحفظ دے کر قادیانیوں کو دائرہ اسلام سے خارج قرار دے دیا۔

دستور کی دفعہ 260 میں اس تاریخی شق کا اضافہ یوں ہوا ہے۔

”جو شخص خاتم النبیین محمد صلی اللہ علیہ و سلم کی ختم نبوت پر مکمل اور غیرمشروط ایمان نہ رکهتا ہو۔اور محمد صلی اللہ علیہ و سلم کے بعد کسی بهی معنی و مطلب یا کسی بهی تشریح کے لحاظ سے پیغمبر ہونے کا دعویٰ کرنے والے کو پیغمبر یا مذہبی مصلح مانتا ہو۔وہ آئین یا قانون کے مقاصد کے ضمن میں مسلمان نہیں۔

اور دفعہ 106 کی نئی شکل کچھ یوں بنی۔۔۔۔۔

بلوچستان پنجاب سرحد اور سندھ کے صوبوں کی صوبائی اسمبلیوں میں ایسے افراد کے لیے مخصوص نشستیں ہوں گی جو عیسائی۔ہندو سکھ۔بدھ اور پارسی فرقوں اور قادیانیوں گروہ یا لاہوری افراد( جو اپنے آپ کو احمدی کہتے ہیں ) یا شیڈول کاسٹس سے تعلق رکهتے ہیں۔ (ان کی) بلوچستان میں ایک۔سرحد میں ایک۔پنجاب میں تین۔اور سندھ میں دو سیٹیں ہوں گی، یہ بات اسمبلی کے ریکارڈ پر ہے۔کہ اس ترمیم کے حق میں 130 ووٹ آئے اور مخالفت میں ایک بهی ووٹ نہیں آیا ۔( آجاتا اگر غامدی صاحب اس وقت موجود ہوتے ) اس موقع پر اس مقدمہ کے قائد مفتی محمود رحمہ اللہ نے فرمایا۔۔۔۔۔۔۔

اس فیصلے پر پوری قوم مبارک باد کی مستحق ہے اس پر نہ صرف پاکستان بلکہ عالم اسلام میں اطمینان کا اظہار کیا جائے گا۔میرےخیال میں مرزائیوں کو بهی اس فیصلہ کو خوش دلی سے قبول کرنا چاہیئے۔کیونکہ اب انہیں غیر مسلم کے جائز حقوق ملیں گے۔اور پهر فرمایا کہ سیاسی طور پر تو میں یہی کہہ سکتا ہوں (ملک کے) الجھے ہوئے مسائل کا حل بندوق کی گولی میں نہیں۔بلکہ مذاکرات کی میز پر ملتے ہیں

نوٹ ) احباب سے لائیک کمنٹس کی حاجت نہیں۔بس مودبانہ درخواست ہے کہ ختم نبوت کی اس آگاہی مہم میں ساتھ دیں۔اور اسے زیادہ سے زیادہ شیئر کریں،

یہ ہمارے بڑوں کی جہدوجہد ہے۔جسے ہم اپنی نئی نسل تک ٹکڑوں ٹکڑوں میں سہی لیکن یہ کاوشیں پہنچا پائیں۔

”شاید کہ تیرے دل میں۔
اتر جائے میری بات“۔تحریر۔سیدحضرت خان_

Saturday, 14 October 2017

Canadian Couple's Kidnap Story - How Credible?


THE CANADIAN COUPLE WHO HAS BEEN RESCUED BY PAKISTAN ARMY
EXPRESS TRIBUNE shared a news story about the Canadian couple which claims Afghan Taliban killed their infant and raped the wife. What big lies! There are different groups in Afghanistan. Afghan Taliban are just one of them (who have nothing to do with TTP or Pakistani Fake Taliban). Now ISIS also has got foothold in Afghanistan and there is fighting going on between the Afghan Taliban and the ISIS terrorists.

Why was the Canadian man there in the first place along with his wife and three children? It's all a fake story to defame the Afghan Taliban who have only been fighting a just war of freedom against US and NATO invaders.

EXPRESS TRIBUNE always supports the ideology of the Western imperial powers instead of the Muslim world.
- S Roman Ahsan.

(Urdu) - Pakistan's Economy, Army & Nawaz Sharif


Pakistan's Economy, Army & Nawaz Sharif


احسن اقبال کو پاک فوج کے جس بیان پر تکلیف ہوئی ہے وہ یہی تھا کہ خراب معاشی حالات ملکی سیکورٹی کے لیے خطرہ ہیں۔۔۔۔۔۔۔ !

کیسے ؟ ۔۔۔۔۔۔۔ ملاحظہ کیجیے ۔۔۔۔۔۔۔۔ !

آج سے چند ماہ بعد پاکستان نے سود کی مد میں عالمی مالیاتی 
اداروں کو 11.3 ارب ڈالر کی ادائیگی کرنی ہے۔ 

چارسالوں میں پاکستان کا سالانہ تجارتی خسارہ 20 ارب ڈالر 
سے بڑھ 32 ارب ڈالر ہوچکا ہے۔ 

تیل سے بجلی بنانے والی کمپنیوں کا 8 ارب ڈالر کا قرضہ چڑھ چکا ہےاور وہ اس رقم کا تقاضہ کر رہی ہیں۔

یہ تقریباً 51 ارب ڈالر بنتے ہیں۔ جبکہ پاکستان کا کل بجٹ تقریباً 50 ارب ڈالر کے لگ بھگ ہے۔

یعنی پاکستان اپنا سارا بجٹ صرف کر کے بھی محض تجارتی خسارہ، سود اور بجلی کے بقایاجات ادا نہیں کر سکتا۔ لیکن اگر یہ ادا کر دیتا ہے تو باقی ملک چلانے کے لیے ایک روپیہ نہیں بچے گا۔

نیتجے میں ۔۔۔۔

لاکھوں سرکاری ملازمین کی تںخواہیں کہاں سے ادا ہونگی؟
پولیس، سرکاری ہسپتال و سکول، لاکھوں بوڑھوں کی پنشنز وغیرہ سب بند کرنی پڑینگی؟

خسارے میں جانے والے بڑے ادارے جیسے ریلوے، سٹیل مل، پی آئی اے وغیرہ کا خسارہ کہاں سے ادا ہوگا؟

صرف میٹروز ہی کا سالانہ خسارہ 5 ارب روپے سے زائد ہے وہ کہاں سے ادا ہوگا؟

صوبوں کو اپنے اخراجات پورے کرنے کے لیے رقم کہاں سے دینگے؟؟

اور ان سب سے بڑھ کر پاکستان کے لیے سینکڑوں محاذوں پر برسرپیکار پاک فوج کی تنخواہیں کہاں سے ادا ہونگی؟ جنگی اخراجات کون پورے کرے گا؟؟

لیکن اگر ادا نہیں کرتے تو بھی پاکستان دیوالیہ قرار پائیگا اور مزید قرضے ملنا بند ہوجائینگے۔ آئی پی پیز بجلی کی پیدوار بند کردینگی یا اتنی کم کر دینگی کہ لوگوں کی چیخیں نکل جائینگی۔ پاکستانی کی بچ جانے والی انڈسٹری بھی تقریباً بند ہوجائیگی۔ 

نتیجے میں وہی صورت حال ہوجائیگی جسکا اوپر ذکر کیا ہے۔

اس صورت حال کو بدتر کرنے کے لیے روپے کی قیمت اچانک 20 سے 30 فیصد گرائی جائیگی۔ اسکا مظاہرہ نواز شریف نے چند دن پہلے ڈالر کے مقابلے میں روپے کی قدر اچانک 3 روپے گراکر کیا جس سے صرف ایک گھنٹے میں پاکستان پر بیرونی قرضہ ڈھائی ارب ڈالر ( 250 ارب روپے) بڑھ گیا تھا۔

کچھ دن پہلے حامد میر اور عبدالمالک نے نواز شریف کی پاکستان آمد سے پہلے ایک خفیہ میٹنگ کا احوال بیان کیا جس میں نواز شریف نے دعوی کیا تھا کہ " میں واپس جا کر لیگل پراسیس کو مختلف طریقوں سے فرسٹیٹ کرونگا۔ چند ماہ بعد پاکستانی کی معاشی حالت اتنی تباہ ہوجائیگی کہ لوگ مجھے یاد کرینگے کہ میرا دور تو بہت بہتر تھا۔ تب میں اس عوامی طاقت کو عدلیہ کے خلاف استعمال کرونگا۔" ۔۔۔۔۔

اپنی برائیاں چھپانے کے لیے ریکارڈ کا آگ لگا دینے والے عادت سے مجبور یہ لوگ اب پوری ریاست کو آگ لگانا چاہتے ہیں تاکہ خود بچ سکیں!

تحریر شاہدخان