Tuesday, 30 August 2016

Afghan Opium Production & NATO, US Invasion


Afghan Opium Production Increased 40 Times Since NATO, US Invasion

Did you know that? Read the whole article...


The Financial System


THE FINANCIAL SYSTEM



THE FINANCIAL SYSTEM

Ken O'Keefe exposes the Financial System - Logical and Best Explained. This will open your eyes about the presence of Central Banks around the world and who owns them...

LINK: https://www.facebook.com/747419318721729/videos/772859846177676/


Monday, 29 August 2016

Real Hero of Pakistan


REAL HERO OF PAKISTAN

No Time for self-indulgence


NO TIME FOR SELF-INDULGENCE
Time to come out of love-poetry and think about Pakistan and the sufferings of people in Muslim countries. And focus on Islam and Islamic spirituality (roohaaniat).

The humans of the whole world matter but it is a truth that the people in many Muslim countries are suffering more due to continuous invasions against these countries by the imperial satanic powers and also due to creating terrorism.

Sunday, 28 August 2016

Women of MQM - Rightly Arrested



WOMEN OF MQM - RIGHTLY ARRESTED

فاروق ستار صاحب فرماتے ہیں کہ " ہماری ماؤوں بہنوں کو چھوڑ دیا جائے " ۔۔۔ پہلی بات تو یہ ہے کہ اگر ماؤوں بہنوں کے حوالے سے اتنی ہی غیرت تھی تو انکو میدان میں کیوں لائے تھے ؟؟؟ دوسری بات ۔۔۔ ان خواتین نے نہ صرف " پاکستان مردہ باد " کے نعرے لگائے بلکہ الطاف حسین کی اپیل پر پاکستان کو توڑنے کا عظم بھی ظاہر کیا۔ انکی گرفتاری ٹھوس شواہد کی بنیاد پر کی گئی ہے۔ ہمیں یاد رکھنا چاہئے کہ اسلام میں چوری کرنے پر ایک عورت کا ہاتھ کاٹا گیا اور زنا پر ایک عورت کو سنگسار کیا گیا اور یہ حضور ﷺ کی اجازت سے ہوا۔ جبکہ یہ دونوں جرائم بغاوت کے مقابلے میں بہت چھوٹے ہیں۔ اگر ان خواتین کو سزائے موت دے کر نشان عبرت نہ بنایا گیا تو پاکستان مذاق بن کر رہ جائیگا۔ محض خواتین ہونے کی بنا پر ان کو معاف نہیں کیا جاسکتا ورنہ ان سے کہیں کم جرائم میں ملوث پاکستان بھر کی جیلوں میں موجود تمام خواتین کو رہا کرنا پڑے گا۔ وہ بھی کسی کی مائیں بہنیں ہیں۔

DISCUSSIONS - Case against MQM


DISCUSSIONS - CASE AGAINST MQM

1- Ahmed Qureshi talks about why MQM is not being totally banned?

LINK: https://www.facebook.com/PTIOfficialVideos/videos/649091805254631/

2- Dr. Israr's "Tanzeem-e-Islami" members discuss on case against MQM (History, Foundation, Aims and Present Scenario)

LINK: https://www.facebook.com/DrIsrarAhmadRA/videos/10153780751832267/

(NOTE: This discussion gives a general analysis according to Islam and is not being shared to promote any Islamic organization/group)

Signs of Times & Dajjal's Fitnah


Dear All,

Assalam-o-Alaikum,

Do not ignore the signs of the present times. We are living in End times and Dajjal's fitnah is working against us. Our Prophet (pbuh) warned Muslims about these times and Dajjal. Dajjal (or Anti-Christ) is the biggest fitnah since the time of Prophet Adam (pbuh) till the Judgment Day (Roz-e-Qayaamah). So you should learn about Dajjal (Anti-Christ), Imam Mahdi (ra) and return of Prophet Isa (as) from the heavens.

Some articles and posts on "Together We Rise!" in this context:



Regards,
Syed Roman Ahsan.

28th August, 2016

Thursday, 25 August 2016

Thursday Night & Surah Al-Kahf


بسم الله الرحمن الرحيم

LEAVE EVERYTHING TONIGHT (THURSDAY NIGHT) FOR 20 MINUTES AND RECITE SURAH AL-KAHF

Recite Surah Al-Kahf (No. 18 in Qur'an) on Thursday Night (Layla-tul-Jumm'ah) - ALLAH (God) will grant a 'Noor' (illuminating light) to you that will stay with you till the next Jumm'ah.
- (Narrated in Al-Baihaqi 3:249)

Wednesday, 24 August 2016

احوالِ بَرزَخ - Ordeals in grave


احوالِ بَرزَخ : قبر میں کیا ہو گا؟

(مصنف: صوفی خادم حسین) - ایک اقتباس
حضرت براء بن عازب رضی اللہ عنہ فرماتے ہیں کہ (ایک دن) ہم رُسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے ساتھ ایک انصاری کے جنازہ میں قبرستان گئے- جب قبر تک پہنچے تو دیکھا کہ ابھی لحد نہیں بنائی گئی ہے- اس وجہ سے نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم بیٹھ گئے- اور ہم بھی آپ صلی اللہ علیہ وسلم کے آس پاس (باادب) اس طرح بیٹھ گئے کہ جیسے ہمارے سروں پر پرندے بیٹھے ہیں- رسول اللہ صلی اللہ علیہ وسلم کے ہاتھ مبارک میں ایک لکڑی تھی- جس سے زمین کرید رہے تھے (جیسے کوئی غمگین کیا کرتا ہے)- پھر آپ صلی اللہ علیہ وسلم نے سر مبارک اُٹھا کر فرمایا- کہ قبر کے عذاب سے پناہ مانگو- دو یا تین مرتبہ یہی فرمایا- پھر فرمایا کہ بلاشبہ جب مومن دُنیا سے آخرت کو جانے لگتا ہے تو اس کی طرف آسمان سے فرشتے آتے ہیں- جن کے سفید چہرے سورج کی طرح روشن ہوتے ہیں- ان کے ساتھ جنتی کفن ہوتا ہے- اور جنت کی خوشبو ہوتی ہے- یہ فرشتے اس قدر ہوتے ہیں کہ جہاں تک اس کی نظر پہونچے وہاں تک بیٹھ جاتے ہیں- پھر (حضرت) ملک الموت علیہ السلام تشریف لاتے ہیں- حتٰی کہ اس کے سر کے پاس بیٹھ جاتے ہیں- اور فرماتے ہیں- کہ اے پاکیزہ روح اللہ کی مغفرت اور اس کی رضامندی کی طرف نکل کر چل- چنانچہ اس کی روح اس طرح سہولت سے نکل آتی ہے جیسے مشکیزہ میں سے (پانی) کا قطرہ بہتا ہوا باہر آجاتا ہے- پس اسے (حضرت) ملک الموت علیہ السلام لے لیتے ہیں- ان کے ہاتھ میں لیتے ہی دوسرے فرشتے پل بھر بھی ان کے ہاتھ میں نہیں چھوڑتے حتٰی کہ اسے لے کر اسی کفن اور خوشبو میں رکھ کر آسمان کی طرف چل دیتے ہیں- اس خوشبو کے متعلق ارشاد فرمایا کہ زمین پر جو کبھی عمدہ سے عمدہ خوشبو مشک کی پائی گئی ہے- اس جیسی وہ خوشبو ہوتی ہے- پھر فرمایا کہ اس روح کو لے کر فرشتے (اوپر) چڑھتے ہیں - اور (زمین پر رہنے والے) فرشتوں کی جس جماعت پر گذر ہوتا ہے وہ پوچھتے ہیں کہ یہ پاک روح کون ہے- وہ اس کا اچھے سے اچھا نام لے کر جواب دیتے ہیں- جس سے دنیا میں بلایا جاتا تھا- کہ فلاں کا بیٹا فلاں ہے- پھر آسمان دنیا تک اس کو پہونچاتے ہیں- اور اس کیلئے دروازہ کھلواتے ہیں اور دروازہ کھول دیا جاتا ہے- اور ہر آسمان کے مقرب فرشتے اپنےقریب والے آسمان تک اس کے ساتھ جاتے ہیں- یہاں تک کہ ساتویں آسمان تک اس کو پہنچایا جاتا ہے- حق تعالٰے فرماتا ہے میرے بندہ کا اعمال نامہ علیین میں لکھو اور اس کو (سوال و جواب کیلئے) زمین پر واپس لے جائو- کیونکہ میں نے انسان کو زمین ہی سے پیدا کیا ہے اور اسی میں ان کو لوٹا دوں گا- اور اسی سے ان کو دوبارہ نکالوں گا- چنانچہ اس کی روح اس کے بدن میں لوٹائی جاتی ہے (مگر) اس طرح نہیں جیسے دُنیا میں تھی- بلکہ اس عالم کے مناسب جس کی حقیقت دیکھنے سے معلوم ہو گی)- پھر اس کے پاس دو فرشتے آتے ہیں- جو آکر اسے بٹھاتے ہیں- اور اس سے سوال کرتے ہیں- کہ تیرا رب کون ہے؟ وہ جواب دیتا ہے - میرا رب اللہ ہے- پھر اس سے پوچھتے ہیں- کہ تیرا دین کیا ہے؟ وہ جواب دیتا ہے- میرا دین اسلام ہے- پھر اس سے پوچھتے ہیں- کہ یہ کون صاحب ہیں؟ جو تمہارے اندر بھیجے گئے وہ کہتا ہے وہ اللہ کے پیغمبر ہیں- پھر اس سے دریافت کرتے ہیں کہ تیرا عمل کیا ہے؟ وہ کہتا ہے کہ میں نے اللہ کی کتاب پڑھی- سو اس پر ایمان لایا اور اس کی تصدیق کی- اس کے بعد ایک پُکارنے والا (اللہ تعالٰی کی طرف سے) آسمان سے پکارتا ہے - کہ میرے بندے نے صحیح صحیح جواب دیا- اس کےلئے جنت کے بچھونے بچھا دو- اور اس کو جنت کی پوشاک پہنا دو- اور اس کے لئے جنت کی طرف دروازہ کھول دو، چنانچہ جنت کی طرف دروازہ کھول دیا جاتا ہے- جس کے ذریعے جنت کی ہوا اور خوشبو آتی رہتی پے- اور اس کی قبر اتنی کشادہ کر دی جاتی ہے کہ جہاں تک اس کی نظر پہونچے- اس کے بعد نہایت خوبصورت چہرے والا، بہترین لباس والا (اور) پاکیزہ خوشبو والا ایک شخص اس کے پاس آکر کہتا ہے- کہ خوشی کی چیزوں کی بشارت سن لے- یہ تیرا وہ دن ہے جس کا تجھ سے وعدہ کیا جاتا تھا- وہ کہتا ہے تم کون ہو؟ تمہارا چہرہ حقیقت میں چہرہ کہنے کے لائق ہے- اور اس لائق ہے کہ اچھی خبر لائے- وہ کہتا ہے کہ میں تیرا عملِ صالح ہوں- اس کے بعد وہ (خوشی میں) کہتا ہے کہ اے رب قیامت قائم فرما اے رب قیامت قائم فرما تاکہ میں اپنے اہل و عیال اور مال میں پہنچ جائوں- اور بلاشبہ جب کافر دُنیا سے جانے اور آخرت کا رخ کرنے کا ہوتا ہے تو سیاہ چہروں والے فرشتے آسمان سے اس کے پاس آتے ہیں- جن کے ساتھ ٹاٹ ہوتے ہیں- اور اس کے پاس اتنی دُور تک بیٹھ جاتے ہیں- جہاں تک اس کی نظر پہنچتی ہے- پھر (حضرت) ملک الموت تشریف لاتے ہیں- حتٰی کے اس کے سر کے پاس بیٹھ جاتے ہیں- پھر کہتے ہیں کہ اے خبیث جان اللہ کی ناراضگی کی طرف نکل- ملک الموت کا یہ فرمان سن کر روح اس کے جسم میں اِدھر اُدھر بھاگی پھرتی ہے- لہٰذا ملک المکوت اس کی روح کو جسم سے اس طرح نکالتے ہیں جیسے بُوٹیاں بھوننے کی سیخ بھیگے ہوئے اُون سے صاف کی جاتی ہے (یعنی کافر کی رُوح کو جسم سے زبردستی اس طرح نکالتے ہیں جیسے بھیگا ہوا اون کانٹے دار سیخ پر لپٹا ہو ہو- (اور اس کو زور سے کھینچا جائے) پھر اس کی روح کو ملک الموت (اپنے ہاتھ میں) لے لیتے ہیں اور ان کے ہاتھ میں لیتے ہی دوسرے فرشتے پلک جھپنے کی برابر بھی ان کے پاس نہیں چھوڑتے حتٰی کہ فورا ان سے لے کر اس کو ٹاٹوں میں لپیٹ دیتے ہیں (جو ان کے پاس ہوتے ہیں) اور ان ٹاٹوں میں سے ایسی بدبو آتی ہے جیسی کبھی کسی بدترین سڑی ہوئی مردہ نعش سے روئے زمین پر بدبو پھوٹی ہو- وہ فرشتے اسے لے کر آسمان کی طرف چڑھتے ہیں- اور فرشتوں کی جس جماعت پر بھی پہنچتے ہیں- وہ کہتے ہیں- کہ یہ کون خبیث روح ہے؟ وہ اس کا برے سے برا نام لے کر کہتے ہیں- جس سے وہ دنیا میں بلایا جاتا تھا- کہ فلاں کا بیٹا فلاں ہے- حتٰی کہ وہ اسے لے کر پہلے آسمان تک پہنچتے ہیں- اور دروازہ کھلوانا چاہتے ہیں- مگر اس کے لئے دروازہ نہیں کھولا جاتا ہے- جیسا کہ اللہ جل شانہء نے فرمایا ہے- سورہ اعراف رکوع ٥ - “اِن کے لئے آسمان کے دروازے نہ کھولے جائیں گے- اور نہ وہ کبھی جنت میں داخل ہوں گے- جب تک اُونٹ سوئی کے ناکے میں نہ چلاجائے-“ پھر اللہ تعالٰی شانہء فرماتے ہیں کہ اس کو کتاب سجین میں لکھ دو- جو سب سے نیچی زمین میں ہے- چنانچہ اس کی روح (وہیں سے) پھینک دی جاتی ہے- پھر حضور صلی اللہ علیہ وسلم نے یہ آیت تلاوت فرمائی- سورہء الحج آیت ٣١): ء ٤)- “اور جو شخص اللہ کے ساتھ شرک کرتا ہے گویا وہ آسمان سے گر پڑا- پھر پرندوں نے اس کی بوٹیاں نوچ لیں- یا اس کو ہوا نے دور دراز جگہ میں لے جا کر پھینک دیا-“ پھر اس کی روح اس کے جسم میں لوٹا دی جاتی ہے- اور اس کے پاس دو فرشتے آتے ہیں- اور اسے بٹھا کر پوچھتے ہیں- کہ تیرا رب کون ہے؟ وہ کہتا ہے ہائے ہائے مجھے پتہ نہیں! پھر اس سے دریافت کرتے ہیں - کہ یہ شخص کون ہیں جو تمھارے اندر بھیجے گئے؟ وہ کہتا ہے ہائے ہائے مجھے پتہ نہیں- جب یہ سوال و جواب ہو چکتے ہیں تو آسمان سے ایک منادی آواز دیتا ہے- کہ اس نے جھوٹ کہا- اس کے نیچے آگ بچھا دو- اور اس کے لئے دوزخ کا دروازہ کھول دو- (چنانچہ دوزخ کا دروازہ کھول دیا جاتا ہے) اور دوزخ کی تپش اور سخت گرم لُو آتی رہتی ہے- اور قبر اس پر تنگ کردی جاتی ہے- حتٰی کہ اس کی پسلیاں بھچ کر آپس میں ادھر کی ادھر چلی جاتی ہیں- اور اس کے پاس ایک شخص آتا ہے - جو بدصورت اور بُرے کپڑے پہنے ہوئے ہوتا ہے- اس کے جسم سے بُری بدبو آتی ہے- وہ شخص اس سے کہتا ہے کہ مصیبت کی خبر سن لے - یہ وہ دن ہے جس کا تجھ سے وعدہ کیا جاتا تھا- وہ کہتا ہے تُو کون ہے؟ واقعی تیری صورت اسی لائق ہے کہ تُو بری خبر سنائے- وہ کہتا ہے کہ میں تیرا بُرا عمل ہوں- یہ سن کر (وہ اس ڈر سے کہ میں قیامت میں یہاں سے زیادہ عذاب میں گرفتار ہوں گا) یوں کہتا ہے کہ اے رب قیامت قائم نہ کر- (حوالہ : مشکٰوہ) - مرتب : سید رُومان اِحسان

مرنے کے بعد کیا ہو گا؟


مرنے کے بعد کیا ہو گا؟ نیک لوگوں اور گناہ گاروں کے ساتھ کیا معاملہ ہو گا؟

نوجوانی میں انسان سوچتا ہے کہ بہت وقت پڑا ہے زندگی میں، اسلئے موج مستی کر لو- لیکن جو بالغ ہو گیا، اس کا حساب شروع اللہ کی عدالت میں - جس حالت میں اس کی موت آئی، ویسے ہی آخرت ہو گی - نوجوانی میں انسان سوچتا ہے کہ بہت وقت پڑا ہے زندگی میں، اسلئے موج مستی کر لو- لیکن جو بالغ ہو گیا، اس کا حساب شروع اللہ کی عدالت میں - جس حالت میں اس کی موت آئی، ویسے ہی آخرت ہو گی - اگر موت کے نزدیک بھی کوئی شخص اپنی زندگی اللہ کی اطاعت میں گذار رہا تھا اور توبہ و استغفار کا اہتمام کرتا تھا تو اُمید ہے اس کی بخشش ہو جائے اور اللہ سب سے بہتر جانتا ہے-

عالم برزخ وہ دنیا اور حالات ہیں جو موت آنے پر بندے پر گذرتے ہیں - نیک بندے کے ستھ کیا ہوتا ہے اور گناہ گار کے ساتھ کیا؟ یہ آج آپ کے ساتھ اِن شااللہ شیئر کروں گا، کتاب “عالمِ برزخ“ سے - - -

- سید رُومان اِحسان

Tuesday, 23 August 2016

Altaf Hussain - No Apology Accepted This Time



ALTAF - NO APOLOGY ACCEPTED THIS TIME
Ministry of Interior must do everything in its capacity to bring this monster back to Pakistan and get him punished by the courts.

Altaf Hussain Apologizes to Army Chief for Anti-Pakistan Speech. LOL!
P.S: He is a culprit of every Pakistani, it is not just about the Army Chief, We all Pakistanis have got one thing to say "Not this time".

Monday, 22 August 2016

VIDEO: Altaf Hussain barks in telephone speech



VIDEO: Altaf Hussain Barks in telephone speech
MQM MUST BE BANNED - Check what Altaf Hussain said in his telephonic speech Naooz Billah


پاکستان ایک ناسور ہے،
پاکستان پوری دنیا کیلئے ایک عذاب ہے،
پاکستان دہشتگردی کا مرکز ہے،
اس پاکستان کا خاتمہ عین عبادت ہوگا - قائد ایم کیو ایم الطاف حسین


نماز، آخرت اور ہماری غفلت


نماز، آخرت اور ہماری غفلت

اسلام علیکم!

میرے ساتھیو، بعض اوقات ہم کچھ غیر ضروری چیزوں میں پڑ جاتے ہیں جو کہ انسانی فطرت ہے- لیکن شکر ہے کہ ایک دوسرے کی رہنمائی کرنے سے ہمیں کوئی راستہ دیکھائی دے دیتا ہے- سیاستدان کیا کر رہے ہیں، اس سے زیادہ اہم یہ ہے کہ ہم نے اپنے لئے کیا راستہ متیعن کیا ہے؟

نماز اسلام کے پانچ بنیادی ارکان میں سے ہے، ایمان (کلمہ طیبہ)، نماز، روزہ، زکٰوہ اور حج -

یاد رکھیں کہ ایک وقت کی نماز جان بوجھ کر ادا نہ کرنا (بغیر کسی مشکل یا مجبوری کے) کبیرہ گناہ ہے جب تک کہ اس کی قضا نماز نہ ادا ہو جائے-

ایک نمازی جب مسجد میں یا گھر میں باقائدگی سے پانچ وقت کی نماز پڑھتا ہے تو نہ صرف اس پر بلکہ سارے گھر والوں پر اَللہ کی رحمت ہوتی ہے- رحمت سے مراد صرف دولت، جائداد یا بالادستی نہیں ورنہ غیر مسلم دُنیا میں بھوکے مرجاتے- رزق کا وعدہ اللہ تعالٰی کی زات نے سب سے کیا ہوا ہے لیکن آخرت کا وعدہ صرف ان سے جو اس کیلئے محنت کریں- اسی لیے کہتے ہیں کہ دُنیا نصیب سے ملتی ہے اور آخرت کوشش سے -

اس لئے ہمٰیں اپنی مصروفیات اور دیگر معمولات کو نماز کے اوقات زہن میں رکھ کر پلان کرنا چاہیئے-

حدیث میں ہے کہ اگر کوئی شخص سمندر میں انگلی ڈال کر نکالے تو اس دُنیا کی مثال پانی کے وہ چند قطرے ہیں جو انگلی پر ہوں، جبکہ آخرت (مرنے کے بعد کی زندگی) کی مثال ایسے ہے جیسے سارا سمندر۔

اَللہ تعالٰی ہمیں صراطِ مستقیم پر چلائے - آمین

نوٹ: مرد کیلئے باجماعت نماز فرض ہے، چاہے وہ مسجد میں پڑھے یا مجبوری کے تحت کہیں اور اس کا اہتمام کرے، اور بہت مشکل میں اکیلا بھی پڑھ سکتا ہے-

تحریر: سید رُومان اِحسان

Words and Pictures

LET'S NOT DENY IT !! - (Click to enlarge & download)


Saturday, 20 August 2016

Religious Freedom for minorities in Pakistan


RELIGIOUS FREEDOM FOR MINORITIES IN PAKISTAN

Islam is religion of humanity no doubt but it also defines some strict limits which no Muslim should cross. Most of the festivities of Non-Muslims like Diwali and even Christmas (apart from others) are based on Shirk (Associating partners with ALLAH) which is the biggest sin ALLAH will never forgive.

We should allow minority Non-Muslims to live in peace in Pakistan and to celebrate their events but Muslims should not participate in them as given above in the post. By participating, Muslims acknowledge the faith of Non-Muslims and their Shirk. However, if there are some events by Non-Muslims which are not of religious nature, then Muslims can take part in them.

Hence, we should give religious freedom to minorities but we should not participate in their religious activities or events or festivities. Thank you.


- S Roman Ahsan.

1955 ‘Good House-Wife’s Guide’


1955 ‘Good House-Wife’s Guide’ Explains How Wives Should Treat Their Husbands

This "Housekeeping Monthly" article details all the ways that a wife should act and how best she can be a partner to her husband and a mother to her children. 61 years later, are you still doing any of these things?

The family structure is not strong these days also because more and more young women are neglecting their primary role of a "homemaker".

LINK: http://bit.ly/2bpN9lm

The Quaid Said



THE QUAID SAID:

“Pakistan not only means freedom and independence but the Muslim Ideology which has to be preserved, which has come to us as a precious gift and treasure and which, we hope others will share with us.” ― Mohammad Ali Jinnah

Celebrating Hindu Festivities or congratulating them


CELEBRATING HINDU FESTIVITIES

Terrorism in Pakistan - NOT due to "Islamic Extremism"



TERRORISM IN PAKISTAN IS NOT DUE TO "ISLAMIC EXTREMISM" - THERE ARE OTHER FACTORS INVOLVED

We need to understand first that many elements in Pakistan enjoy condemning "Islamic Extremism" because in fact they don't want Islamic affairs taking charge of our social, economic and political lives.

Terrorism in Pakistan is the result of 

1- Mushharraff's policies in totally aligning with US after 9/11 and sending our own forces to Pakistan North to kill our tribesmen in 2003. There were no terrorists in Pakistan North in 2003, only tribesmen going to Afghanistan to help our Afghan brothers who were resisting the invading army of US & NATO alliance.

2- Drone attacks on Pakistan's soil killing many innocent civilians.

3- RAW, CIA and the Israeli Mossad have been very active against Pakistan and they created TTP (Tehrik-e-Taliban Pakistan) after 2005 against Pakistan Army and Pakistan in general to destabilize the country. TTP are not true Taliban, they are impostors to defame the REAL TALIBAN, the Afghan Taliban.

- by S Roman Ahsan

Wednesday, 17 August 2016

Tribute to Zia - Aug 17, 2016




TRIBUTE TO ZIA ON HIS DEATH ANNIVERSARY, 17th August - BY ALIYA ALI
عظیم لیڈر ، دلیر سپاہ سالار ،بہت بڑا مدبر ، نہایت ذہین سیاست دان بہترین سفارت کار، تعلقات عامہ کا بہت بڑا ماہر اور ایک سچا اور کھرا مسلمان ۔۔۔۔۔۔۔۔۔!!!

میرے پاس زیادہ بہتر الفاظ نہیں ہیں جو میں جنرل ضیاء الحق کے لیے کہہ سکوں ۔۔۔۔۔ آج ان کا یوم شہادت ہے میں جانتی ہوں کہ اسکی مدح سرائی پر مجھے کچھ نہیں مل سکتا سوائے تنقید اور طنز کے ۔۔۔۔ لیکن یہ میرے دل سے نکلے ہوئے الفاظ ہیں اور مجھے اس معاملے میں سوائے اللہ کے اور کسی کا ڈر نہیں اور میں حق ضرور کہونگی ۔۔۔۔۔۔

جنرل ضیاء ایک غریب اور مذہبی خاندان سے تعلق رکھتے تھے اور فوج میں کمیشن لے کر رفتہ رفتہ چیف آف آرمی سٹاف بن گئے اور بعد میں پاکستان کے سربراہ۔!!

جنرل ضیاء کا تعلق مذہب کی طرف بچپن سے ہی تھا فوج میں کمیشن لینے پر ایک انگریز افسر نے انکی اس مذھب پسندی پر سرزنش کی تھی جس پر وہ اس افسر کے سامنے اکڑ گئے تھے ۔۔۔۔ بریگیڈیر بن گئے تب انکے نیچے کام کرنے والی بریگیڈ سے شراب نوشی کا خاتمہ کر دیا گیا گو اس وقت پاک آرمی کے میسوں اور حکومت کے اعلی طبقاب میں شراب نوشی عام تھی اور انکے دیکھا دیکھی اور انکی ترغیب پر اسکی بریگیڈ کے اکثر لوگ نمازی بھی بن گئے ۔۔۔۔۔۔۔ !!
سربراہ مملکت بننے کے بعد بھی انکی یہی روش رہی اور ریاستی طور پر جو کچھ نفاذ اسلام کے لیے کیا جا سکتا ہے جنرل ضیاء نے وہ سب کچھ کیا اور جتنا کام اسنے کیا اس سے پہلے اور بعد کے حکمران اس کا دسواں حصہ بھی نہ کر سکے ۔۔!!

جنرل ضیاء نے ایک جمہوری حکومت کا تختہ کیوں الٹا اسکا مختصر جواب قائداعظم کے رفقائے کار میں سے ایک مشہور دانشور و صحافی جناب زیڈ اے سلہری صاحب کے ان الفاظ میں ملتا ہے ۔۔۔۔"اگرچہ ضیاء پر یہ الزام عائد کیا جاتا ہے کہ انہوں نے فوجی آمریت کو دوام بخشا مگر اس بات کی اصلیت یہ ہے کہ بھٹو نے جمہوریت کا ایسا خرابہ کر کے رکھ دیا تھا کہ ملک کی سالمیت ہی خطرے میں پڑ گئی تھی "۔۔۔۔!!
روس سے پاکستان نے اپنی بقا کی جنگ لڑی تھی ۔۔روس افغانستان میں کبھی نہ رکتا ۔۔۔۔۔۔اور چونکہ امریکہ بھی روس کا دشمن تھا لہذا چار سال بعد وہ بھی اس جنگ میں شریک ہوگیا وہ بھی ضیاء الحق کی شرائط پر ۔ اور جو شرائط امریکہ سے منوائیں گئیں وہ شائد سفارت کاری کی تاریخ کا ایک ناقابل یقین کارنامہ ہوگا جبکہ پاکستان سخت کمزوری کی حالت میں تھا ۔۔۔!!

روس کو شکست دینا ضیاء الحق کا عظیم کارنامہ تھا جن کو اس جنگ پر اعتراض ہے وہ اس سوال کا جواب کبھی نہیں دے پاتے کہ " اگر ضیاء روس کو افغانستان میں نہ روکتا تو کیا کرتا ؟ کیا روس کے پاکستان پر حملے کا انتظار کرتا رہتا ؟؟" اور اس جملے کے جواب میں کہ " ضیاء امریکہ کا ایجنٹ تھا" ہم ایک ممتاز بھارتی صحافی اور دانشور جناب ایم جے اکبر صاحب کے سن 88 میں " انڈیا ٹوڈے " میں چھپنے والے ایک مضمون کا اقتباس پیش کرتے ہیں ۔۔۔۔۔۔!
"صدرضیاءالحق کسی نہ کسی طرح امریکہ کے ساتھ دوستی اپنی شرائط پر قائم رکھنے میں کامیاب ہو چکے ہیں ۔ صدر ضیاءالحق کا یہی امتیاز ہے کہ پاکستان کے تمام سول اور فوجی حکمرانوں میں واحد ہیں جنہوں نے پاکستان کے کسی موءقف میں ذرا بھی لچک پیدا کیے بغیر امریکہ سے اپنے معاملات کو درست رکھا"۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ ضیاء ہی تھا جس نے عراق اور ایران کی جنگ کو بزور طاقت روک دیا تھا ۔
ضیاء کے دور میں کشمیر کے معاملے پر انڈیا سفارتی لحاظ سے اور عملاً اپنی تاریخ کی کمزور ترین اور بدترین صورت حال سے دوچار ہو چکا تھا اور خالصتان نامی سکھوں کا علیحدہ ملک تقریباً بن گیا تھا جس سے ہمارا کم از کم آدھا بارڈر انڈیا سے محفوظ ہوجاتا بمع کشمیر کے۔۔۔۔۔۔۔۔!!

انڈیا کے لیے جنرل ضیاء الحق ایک بھیانک خواب بن چکے تھے یہ ضیاء الحق کا کمال تھا کہ انڈیا کو اپنی بہت بڑی جنگی مشین استعمال کرنے کا موقع دئیے بغیر وہاں تک لے گئے تھےکہ انڈین دانشور چیخنے لگے " اگر ضیاء زیادہ دیر زندہ رہا تو بھارت ماتا کے ٹکڑے ٹکڑے کر دے گا۔۔۔۔۔۔!!"

پھر جب انڈیا اپنی ساری فوج بارڈر پر لے آیا تو ضیاء کے محض چند جملوں نے انڈیا کی اس ساری ملٹری کیمپین کو بے معنی کر کے رکھ دیا
ضیاءالحق جب اقتدار میں آیا تو ایٹم بم محض کاغذوں تک محدود تھا یہ ضیاء ہی تھا جس نے بغیر کسی دباؤ میں آئے غیر معمولی برق رفتاری سے اسکی تکمیل کی اور ساتھ ہی اس وقت کے لحاظ سے پاکستان کے لیے جدید ترین جنگی جہاز ایف 16 حاصل کیے اور پاکستان کی دفاعی قوت میں غیر معمولی اضافہ کیا ۔!!

پاکستان کے ایٹمی پروگرام پر حملے کی سازش کےجواب میں ضیاء الحق نے نہایت جراءت سے فوری طور پر انڈین اور اسرائیلی ایٹمی پروگرامز پر بیک وقت حملہ کرنے کا پلان بنایا ۔ جسکی انکو خبر ہوگئی اور وہ حملہ کرنے کی جراءت نہ کر سکے
جب عرب مسلم لیڈروں کے اجتماع میں مصر نے شرکت سے انکار کیا تو اس کو منانے کے لیے جنرل ضیاء سے درخواست کی گئی ۔ پھر ضیاء کی محنت کا یہ اثر ہوا کہ وہی عرب جو ایک دوسرے سے بات کرنے پر تیار نہ تھے " یا اخی " کہہ کر روتے ہوئے ایک دوسرے سے لپٹ گئے اور مصر مان گیا ۔
اقوام متحدہ میں جب مسلمانوں کا موقف پیش کرنے کی بات آئی تو پوری دنیا کے مسلمانوں نے ضیاء الحق کا نام چنا پاکستان عملاً مسلم دنیا کا لیڈر ملک بن چکا تھا۔۔۔۔۔۔!!

ان سب معاملات کے ساتھ ساتھ ضیاء کا دور ارزانی او برکت کا دور تھا جب مسلسل گیارہ سال تک چیزوں کی قیمتوں میں استحکام رہا ۔ عوام خوشحال تھے سوائے ان چند گنے چنے لوگوں کے جن کو نظریاتی اختلاف تھا یا جن کو جمہوریت نامی بیماری لاحق تھی ۔!!

بھٹو میڈیا میں جو فحاشی لایا تھا اس کو بند کر دیا گیا ۔

ضیاء کو خراب اور کمزور جمہوریت ہی نے کیا جب اسنے جونیجو حکومت قائم کرکے جمہوریت کے لیے راہ بنائی اور جونیجو نے فوری طور پر ہر جمہوری حکومت کی طرح عوام کو چھوڑ کر ضیاءالحق اور پاک فوج کو ہی نشانہ بنانے پر اپنی توانائیاں صرف کرنی شروع کر دیں ۔۔۔!!
جنیوا کنونشن پر باوجود ضیاء کی مخالفت کے دستخظ کر دئیے گئے جبکہ جنرل ضیاء کا موقف تھا کہ اگر افغانستان میں مجاہدین کی حکومت تسلیم کروائے بغیر یہ دستخط کیے گئے تو افغانستان میں خانہ جنگی ہو جائیگی اور افغان مہاجرین پاکستان ہی میں رہ جائیںگے ۔۔۔!! اور بعد میں بلکل یہی ہوا۔۔۔۔۔!!

دوسری سازش ضیاء کے خلاف اوجڑی کیمپ کی صورت میں کی گئی جس میں ان بالشتی جمہوریوں نے محض جنرل ضیاء کی مخالفت میں ملک کی سالمیت کو ہی داؤ پر لگا دیا اور ضیاء الحق کے پاس کوئی چارہ نہ رہا سوائے اسکے کہ جمہوری بساط کو لپیٹ دے ( اس پر اگلے کسی مضمون میں تفصیل سے لکھیں گے کہ وہ کیا کرنے والے تھے )
لیکن ان سب اندرونی سازشوں کے باوجود ضیاء الحق امریکہ ، انڈیا اور اسرائیل کے لیے ناقابل برداشت ہوتا جا رہا تھا ۔۔۔۔۔ انکو قتل کرنے کئی کوششیں ہوئیں لیکن جب ضیاء الحق نے وہ جراءت کر لی جسکا آج تک ہم صرف خواب دیکھتے آئے ہیں تب اس پر فیصلہ کن وار کیا گیا اور اس وار میں نام نہاد جمہوری پارٹی کے ایک وارث شاہنواز بھٹو کی دہشت گرد تنظیم الذولفقار نے اہم کردار ادا کیا ۔۔۔۔۔۔۔۔!!

وہ جراءت کیا تھی ؟۔۔۔بہت کم لوگ یہ جانتے ہونگے کہ ضیاءالحق پاکستان ، افغانستان اور ایران کا ایک بلاک بنانے کے اتنے قریب آگئے تھے کہ روسی انخلاء کے صرف دو سال بعد اس معاہدے پر دستخط ہونے تھے جسکے تحت اس بلاک کا سربراہ پاکستان ہوتا اور ترکی سمیت کئی اور مسلم ممالک نے بھی اس میں اپنی بھر پور دلچسپی ظاہر کی تھی ۔۔!! یہی ضیاءالحق کا خطرناک ترین اقدام تھا جسکی طرف وہ تیزی سے بڑھ رہا تھا۔
" مسلمانوں کی ایک مشترکہ حکومت کا خواب"۔۔!!
ضیاء کو امریکہ وغیرہ کا ایجنٹ کہنے والے۔۔۔۔۔ سابقہ امریکن سفیر برائے انڈیا مسٹر گنٹر ڈین کا یہ بیان پڑھ لیں کہ "ضیاء الحق کو را، موساد اور سی آئی اے نے ملکر قتل کیا ہے کیونکہ ضیاء پوری دنیا کا نقشہ تبدیل کرنے پر تلا ہوا تھا ۔ امریکہ کے لیے مسئلہ یہ ہے کہ وہ جانتے ہیں کہ ضیاء ایسا کر سکتا ہے " ۔۔۔۔۔!! اس سفیر کو امریکہ نے پاگل قرار دے کر بند کر دیا تھا وہ آج بھی زندہ ہے اور اپنا کیس امریکی حکومت کے خلاف لڑ رہا ہے ۔!!

ضیاء پر ایم کیو ایم اور افغان مہاجرین کا الزام عائد کیا جاتا ہے اس پر بھی تفصیل سے بات کرنے کی ضرورت ہے یہاں مختصرا یہ کہیں گے کہ اس وقت کے لحاظ سے مہاجرین کو پناہ دینا مجبوری تھا جبکہ ایم کیو کیو کو قائم کرنے کے یا طاقت دینے کا الزام سفید جھوٹ ہے ۔۔!!

کلاشنکوف کلچر اور ہیروئن کلچر والے الزامات بھی محض فلسفے اور پرتعصب نعرے ہیں جنکو اتنی مرتبہ دہرایا گیا ہے کہ لوگوں کی زبان پر چڑھ گئے ہیں ۔ اصلیت یہ ہے کہ کلاشنکوف افغانستان میں روس لایا اور افیون جنگ کی وجہ سے افغانستان میں کاشت کی گئی ۔ پاکستان اور افغانستان کی غیر معمولی لمبی اور پیچیدہ سرحد پر انکی پاکستان سمگلنگ آسان تھی ۔ جو لوگ ضیاء پر الزام لگاتے ہیں ان میں سے کوئی ایک بھی آج تک اس سمگلنگ کو نہیں روک سکا ہے ۔ ہاں ضیاء کے بعد یہ سمگلنگ بڑھ ضرور گئی کم نہیں ہوئی ۔

نیز جن جہادیوں کی بات کی جاتی ہے تو یہ ایک تاریخی حقیقت ہے کہ وہ ضیاء الحق نے نہیں بلکہ بھٹو نے سردار داؤود کے خلاف تیار کیے تھے جن کو جنرل نے صرف روس کے خلاف استعمال کیا ۔ اور ضٰیاء کے مجاہدین آج بھی پاکستان کے خلاف نہیں ہیں نہ انکا پاکستان کے خلاف لڑنے والوں سے کبھی کوئی تعلق رہا ہے ۔۔۔۔!!
ہاں امریکہ کا جو حشر آج افغانستان میں ہو رہا ہے اسکے لیے ہم امریکی دانشوروں میں سے ایک ضیاء مخالف دانشور سلیگ ہیرسن کی واشنگٹن پوسٹ میں لکھے ایک آرٹیکل کا حوالہ دیتے ہیں اسنے لکھا تھا کہ ۔۔۔۔۔۔۔۔۔

"ضیاء کے مر جانے کے بعد بھی جنرل کی روح پاکستان اور امریکہ کی افغان پالیسی پر چھائی ہوئی ہے مرحوم نے جو طاقتور ملٹری اینٹلیجنس تنظیم (آئی ایس آئی) قائم کی تھی آج بھی وہی افغان معاملات کو کنٹرول کر رہی ہے"

آج بھی امریکہ ضیاءالحق کے ہاتھوں افغانستان میں شکست سے دوچار ہے ۔۔۔!!

ضیاء الحق کے بارے میں میں مختصراً یہ کہونگی کہ ہم پاکستان اور اسلام کے معاملے میں میں دن رات جو لفاظی اور یاوہ گوئی کرتے رہتے ہیں اور عملاً باتوں کے علاوہ کبھی کچھ نہیں کر پاتے جنرل ضیاء واحد مسلم لیڈر تھے جو اس جدید دور میں ان سب باتوں کو عملی جامہ پہنانے پر تلے ہوئے تھے اور عملاً وہاں تک چلے گئے تھے کہ اگر کچھ عرصہ اور زندہ رہتے تو شائد دنیا کا نقشہ ہی کچھ اور ہوتا ۔۔۔۔۔!!!

اس کو غاصب اور ڈکٹیٹر کہنے والے اس پر کیا کہیں گے کہ جب یہ" غاصب اور ڈکٹیٹر" فوت ہوا تو دس لاکھ کے لگ بھگ پاکستانی اسکے جنازے میں شریک ہوئے اور پورے پاکستان میں لوگ روئے ۔۔۔۔۔

یہ ضیاء کا ایسا ریفرنڈم تھا جو تا قیامت اسکو امر کر گیا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔!!

Sunday, 14 August 2016

Burj Khalifa on 14th August Night


Burj Khalifa in Dubai Tonight, 14th August - Pakistan Independence Day
One of the world's tallest buildings


Saturday, 13 August 2016

Mammograms and the deceptive health industry


MAMMOGRAMS AND THE DECEPTIVE HEALTH INDUSTRY:

Actually the above is a satire. But the objective of this post is that instead of diagnosing cancer, these mammogram machines 'might' actually cause more problems that were not present before. There is a whole industry involved. First they themselves create problems, and then they earn money by providing solutions. Just like the doctors today falsely recommend caesarian operation for delivery of babies, just to earn money when in fact the delivery could be handled normally. Hence we should be careful and should never blindly trust the doctors or medical industry.

Pakistan Independence Day - 2016

PAKISTAN INDEPENDENCE DAY 2016

Today, 14th August is the day when the Muslims of Indo-Pak Subcontinent.......wait a minute.....lolz....you already know all of this. So what do I have something new for you? Here is a selection of some relevant images which can inspire us and motivate us. They inspired and motivated me at least. PAKISTAN ZINDABAD !!



اور انصاف کرنا صرف حکومت کا کام نہیں بلکہ ہر پاکستانی کا کام ہے کہ وہ اپنے اردگرد کے لوگوں اور اپنے ماحول سے اور اپنے کام سے اور اپنے وطن سے انصاف کرے







Thursday, 11 August 2016

Sad Poetry And You


SAD POETRY AND YOU

Whatever you talk about will affect you also. If you talk about happiness and blessings, you will feel happiness around you. But if you talk about sadness and grief, then it will also have an effect. It is not wrong to talk about losses or grief when discussing anything in constructive manner, however we should avoid SAD POETRY because it serves no purpose and only increases our sadness. Islam also prohibits such poetry and poetry with constructive messages like that by Allama Iqbal instead is more valued by Islamic standards.

- S Roman Ahsan.

Thursday Night - Surah Al-Kahf


SURAH AL-KAHF ON THURSDAY NIGHT - LAYLA-AL-JUM'AH

Time for Zohar Salah

Time for Zohar Salah - Best is to offer it in Masjid...




Monday, 8 August 2016

VIDEO - Quetta Blast - Analysis by ZH


Quetta Blast - Who is responsible? Listen to Zaid Hamid Sb speaking -


Media channel organizers unfortunately lack the right sense not to play music in the background knowing very well that blast in hospital has killed close to 90 Pakistanis - Was that thrilling or tragic?

Friday, 5 August 2016

Iqbal - Zamana Aaya Hai Be-Hijaabi Ka

Iqbal - Zamana Aaya Hai Be-Hijaabi Ka





From Iqbal's 

(Bang-e-Dra-092) March 1907 (مارچ ١٩٠٧)

English Translation also after every couplet - 



                                                                    March 1907
Zamana Aya Hai Behijabi Ka, Aam Didar-e-Yar Ho Ga
Sakoot Tha Parda Dar Jis Ka, Woh Raaz Ab Ashkar Ho Ga

Era has come for openness, so Beloved’s Sight will be common.
The secret which silence had concealed, will be unveiled now.

Guzar Gya Ab Woh Dor Saqi Ke Chup Ke Peete The Peene Wale
Bane Ga Sara Jahan Maikhana, Har Koi Bada Khwar Ho Ga

O Cup-bearer! Time has gone when wine was taken secretly.
The whole world will become a wine-seller shop, everyone will be drinking

Kabhi Jo Awara’ay Junoon The, Woh Bastiyon Mein Phir Aa Basain Ge
Barhna Payi Wohi  Rahe Gi, Magar Naya Khar Zaar Ho Ga

Those who once wandered insane, will return to habitations
Lovers’ wandering will be the same but deserts will be new

Suna Diya Gosh-e-Muntazir Ko Hijaz Ki Khamshi Ne Akhir
Jo Ehad  Sehraiyon Se Bandha Gya Tha, Phir Ustawar Ho Ga

The Hijaz’ silence has proclaimed to the waiting ear at last
The agreements(promises) established with desert’s inhabitants will be re-affirmed

Nikl Ke Sehra Se Jis Ne Roma Ki Saltanat Ko Ulat Diya Tha
Suna Hai Ye Qudsiyon Se Main Ne, Woh Sher Phir Hoshyar Ho Ga

Which coming out of deserts had overturned the Roman Empire
I have heard from the Qudsis (Angels) that the same 'Lion' will be re-awakened

Kiya Mera Tazkara Jo Saqi Ne Badah Khawaron Ki Anjuman Mein
To Peer-e-Maikhana Sun Ke Kehne Laga Ke Munh Phat Hai, Khuwar Ho Ga

As the cup‐bearer mentioned me in the wine‐drinkers’ assembly
The tavern’s sage said, “He is insolent, he will be disgraced”

Diyar-e-Maghrib Ke Rehne Walo ! Khuda Ki Basti Dukan Nahin Hai
Khara Jise Tum Samajh Rahe Ho, Woh Ab Zr-e-Kam Ayaar Ho Ga

O Western world’s inhabitants, God’s world is not a shop!
What you are considering genuine, will be regarded counterfeit(fake)

Tumhari Tehzeeb Apne Khanjar Se Ap Hi Khudkushi Kare Gi
Jo Shakh-e-Nazuk Pe Ashiyana Bane Ga, Na Paidar Ho Ga

Your civilization will commit suicide with its own dagger(knife)
The nest built on the weak branch will not be permanent, stable

Safina’ay Barg-e-Gul Bana Le Ga Qafla Moor-e-Natawan Ka
Hazar Moujon Ki Ho Kashakash Magar Ye Darya Se Paar Ho Ga

The caravan of the feeble ants will make fleet of rose petals
However strong the ocean waves’ tumult(uprising) be, it will cross the ocean

Chaman Mein Lala Dikhata Phirta Hai Dagh Apna Kali Kali Ko
Ye Janta Hai Ke Iss Dikhawe Se Dil Jalon Mein Shumar Ho Ga

The Lala (a bird), shows its spots to every flower-bud in the garden.
Knowing that by doing this it will be among the Love haters

Jo Aik Tha Ae Nigah Tu Ne Hazar Kar Ke Humain Dikhaya
Yehi Agar Kaifiyat Hai Teri To Phir Kise Itibaar Ho Ga

O Sight! That was the One you showed us as a thousand
If this is your state what will be your credibility?

Kaha Jo Qumri Se Main Ne Ek Din, Yahan Ke Azad Pa Ba Gil Hain
To Ghunche Kehne Lage, Humare Chaman Ka Ye Raazdaar Ho Ga

As I told the turtledove one day the free of here are treading on dust!
The buds started saying that I must be the knower of the garden’s secrets!

Khuda Ke Ashiq To Hain Hazaron, Bannu Mein Phirte Hain Mare Mare
Mein Uss Ka Banda Bano Ga Jis Ko Khuda Ke Bandon Se Pyar Ho Ga

There are thousands of God’s Lovers, who are roaming in the wilderness
I shall adore the one who will be the lover of God’s people

Ye Rasm-e-Bazm-e-Fana Hai Ae Dil! Gunah Hai Junbish-e-Nazar Bhi
Rahe Gi Kya Abru Humari Jo Tu Yahan Be-Qarar Ho Ga

This is the world’s custom, O Heart! Even winking is a sin
What will our respect be if you will be restless here?

Mein Zulmat-e-Shab Mein Le Ke Niklun Ga Apne Darmandah Karwan Ko
Sharar Fishan Ho Gi Aah Meri, Nafas Mera Shaola Bar Ho Ga

In the darkness of the night I shall take out my tired caravan
My sigh will be shedding sparks my breath will be throwing flames

Nahin Hai Ghair Az Namood Kuch Bhi Jo Maddaa Teri Zindagi Ka
Tu Ek Nafas Mein Jahan Se Mitna Tujhe Misl-e-Sharaar Ho Ga

If there is nothing but show in the aim of your life
Your destruction from the world will be in a breath like spark

Na Pooch Iqbal Ka Thikana, Abhi Wohi Kaifiyat Hai Uss Ki
Kahin Sar-e-Rah Guzar Baitha Sitam Kash-e-Intizar Ho Ga

Do not ask about the condition of Iqbal, he is in the same state
Sitting somewhere by the wayside he must be waiting for oppression!


PLEASE VISIT THE BLOG OF IQBAL'S POETRY AND READ COMMENTS ALSO AT THE END